اَخلاق کی درستگی کے لیے دس مسنون ذکر و اَذکار  (2)

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
جون 11, 2022 - افکار شاہ ولی اللہؒ
اَخلاق کی درستگی کے لیے دس مسنون ذکر و اَذکار  (2)

 

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں :

(4۔ ’’اللّٰہ أکبر‘‘ کی عظمت اور سلطنت )

’’چوتھا ذکر ’’اللّٰہ أکبر‘‘ ہے۔ اس جملے میں اللہ کی عظمت اور اُس کی قدرت اور اُس کی بادشاہت اور سلطنت کو ملاحظہ کرنا ہوتا ہے۔ یہ کلمہ اللہ کی معرفتِ ثبوتی کی طرف رہنمائی کرتا ہے۔ اسی لیے اس جملے کی فضیلت میں درجِ ذیل حدیث وارد ہوئی ہے کہ: ’’اللّٰہ أکبر‘‘ آسمان و زمین کے درمیان تمام چیزوں کو بھر دیتا ہے‘‘۔ (مشکوٰۃ، حدیث: 2322)

(ان چار کلمات کی فضیلت میں ارشاداتِ نبویؐ)

(1)         ’’یہ چار کلمات تمام کلمات سے افضل ہیں: (۱) سبحان اللّٰہ، (۲) و الحمد للّٰہ، (۳) و لا الٰہ إلَّا اللّٰہ، اور (۴) اللّٰہ اکبر‘‘۔ (رواہ مسلم، مشکوٰۃ، حدیث: 2294)

(2)         اور ایک روایت میں ہے کہ: ’’اللہ تبارک و تعالیٰ کو یہ چاروں کلمات بہت محبوب ہیں۔ تمھیںان کے پڑھنے سے کوئی نقصان نہیں ہوگا۔ ان میں سے جس کلمے کو چاہو پہلے پڑھ سکتے ہو‘‘۔ (حوالہ بالا)

(3)         اور ایک روایت میں ہے کہ: ’’یہ چاروں کلمات جنت میں باغ لگانے کا باعث بنتے ہیں‘‘۔ (مشکوٰۃ، حدیث: 2315)

(دوسری حدیث میں دیگر چار کلمات کی فضیلت کا سبب)

حضرت جویریہؓ روایت کرتی ہیں کہ نبی اکرم ﷺ میرے پاس سے صبح نماز پڑھانے کے لیے تشریف لے جا رہے تھے کہ میں اپنے مصلّے پر بیٹھی تھی۔ پھر چاشت کے وقت حضوؐر واپس تشریف لائے تو میں اُسی طرح اپنے مصلّے پر بیٹھی ہوئی تھی۔ تو رسول اللہؐ نے مجھ سے پوچھا کہ: ’’جس حالت میں مَیں تمھیں چھوڑ کر گیا تھا، تم اُس وقت سے اسی طرح بیٹھی ہوئی ہو؟‘‘ تو انھوںنے فرمایا کہ: ہاں! نبی اکرمؐ نے فرمایا: ’’میں نے اُس کے بعد چار کلمات تین مرتبہ پڑھے ہیں۔ اگر اُن کا وزن تمھارے اب تک پڑھے ہوئے کلمات کے ساتھ کیا جائے تو میرے پڑھے ہوئے یہ کلمات اُن سے زیادہ وزنی ہوں گے: ’’سُبحان اللّٰہ و بِحَمْدہٖ (۱) عَدَدَ خَلْقِہٖ، (۲) و رِضَائَ نَفْسِہٖ، (۳) و زِنَۃَ عَرشِہٖ، (۴) و مِدادَ کَلِمَاتِہ‘‘۔ (رواہ مسلم، مشکوٰۃ، حدیث: 2301)

(ترجمہ: اللہ کی تسبیح و تحمید ہے (۱)اُس کی تمام مخلوق کی تعداد کے برابر، (۲)ذاتِ باری تعالیٰ کی اپنی رضا کے برابر، (۳)اُس کے عرش کے وزن کے برابر، (۴) اُس کی تعریف میں لکھے گئے کلمات کی روشنائی کے برابر۔)

اس حدیث کی حقیقت یہ ہے کہ کسی عمل کی شکل و صورت جب نامۂ اَعمال میں قرار پکڑ لیتی ہے تو اس کی جزا او رثواب کے موقع پر اُس صورت کا پھیلاؤ اور اُس کی وسعت اُس کلمے کے معنی کے اعتبار سے ہوتی ہے۔ مثلاً اگر کلمہ ’’عَدَدَ خَلْقِہٖ‘‘ کے عمل کی صورت وجود میں آئی ہے تو اُس کی وسعت اس جملے کے معنی کی وسعت کے مطابق ہوگی۔

(ذکر اَذکار کرنے والوں کے لیے ایک اُصولی ضابطہ)

یہ بات اچھی طرح جان لینی چاہیے کہ جس آدمی کا زیادہ تر میلان ذکر اللہ کے معنی کے رنگ سے اپنے نفس کو رنگین کرنے کی طرف ہوتا ہے تو اُس کے حق میں یہ بات مناسب ہے کہ وہ ذکر اللہ کثرت سے کیا کرے۔ اور جس آدمی کا زیادہ تر میلان اپنے نامۂ اَعمال میں عمل کی صورت کو زیادہ محفوظ کرنے اور قیامت کے دن اُس کے نتائج کی طرف ہو تو اُس کے حق میں زیادہ نفع بخش بات یہ ہے کہ وہ ایسا ذکراختیار کرے جو کیفیت کے اعتبار سے باقی تمام ذکرو اذکار سے فائق اور بلند تر ہو۔

کسی آدمی کو یہ نہیںکہنا چاہیے کہ ’’جب ان کلمات کو صرف تین مرتبہ پڑھنا باقی تمام ذکر اذکار سے افضل ہے تو پھر ذکر کی کثرت کرنا اور سارے وقت کو اُس میں استعمال کرنا وقت کا ضائع کرنا ہے؟‘‘ اس لیے کہ بعض کلمات کی فضیلت ایک اعتبار سے ہے اور بعض دوسرے کلمات کی فضیلت دوسرے اعتبار سے ہوتی ہے۔

(امامِ انقلاب مولانا عبیداللہ سندھیؒ اس کی تشریح میں فرماتے ہیں: ’’یعنی اس اعتبار سے کہ کم الفاظ اور بغیر تکرار کے زیادہ ثواب حاصل ہو تو یہ (حدیثِ جویریہؓ والے) کلمات افضل ہیں۔ اور اس اعتبار سے کہ ذکر کے رنگ سے نفس کو رنگین کرنا ہے اور قلب کو اُس ذکر کے معنیٰ سے منور کرناہے تو پھر پہلے چار کلماتِ ذکر کی کثرت کرنا اور انھیں باربار دُہرانا اور اپنے زیادہ تر وقت کو اس میں خرچ کرنا زیادہ افضل ہے۔)

(مترجم کہتا ہے کہ: اسی لیے صوفیائے کرام اپنے مسترشدین کے نفوس کو ذکر اللہ سے رنگین کرنے اور قلوب کو ذکر اللہ سے منور کرنے کے لیے ذکر و اذکار کی کثرت اور اپنے زیادہ تر اوقات کو اس کے شَغَل میں مشغول رکھنے کا حکم دیتے ہیں۔)

نبی اکرم ﷺ نے اُم المؤمنین حضرت جویرؓیہ کو اعمال کے ثواب کے اعتبار سے رہنمائی کی ہے۔ اور اس سلسلے میں اُن کو ترغیب دی ہے۔

نبی اکرم ﷺ نے ذکر کے حوالے سے جو یہ طریقۂ کار بیان فرمایا ہے کہ ’’اللّٰہ أکبر‘‘ اور باقی دیگر کلمات کو ’’لا إلٰہ إلَّا اللّٰہ‘‘ کے ساتھ ملا کر پڑھا جائے تو اس کا راز یہ ہے کہ اس طرح انسانی نفس کو ذکر الٰہی کی طرف پوری توجہ حاصل رہتی ہے۔ ورنہ تو وہ صرف زبانی تلفظ اور لقلقہ رہ جاتا ہے۔(حضرت سندھیؒ اس کی تشریح میں فرماتے ہیں کہ: ’’اگر کوئی آدمی صرف ’لا إلٰہ إلَّا اللّٰہ‘‘ کا ذکر کرے اور اُسی کو دُہراتا رہے تو وہ اُس کی عادت بن جاتا ہے اور وہ بغیر کسی توجہ اور غور و فکر کے پڑھتا رہتا ہے، لیکن جب اُس کے ساتھ اپنی حالت کے تقاضوں کے مطابق باقی کلمات کبھی کبھی ساتھ شامل کرتا رہے تو یہ بات انسانی نفس کو متنبہ کرنے میں بڑا کردار ادا کرتی ہے۔ اور انسان پورے طریقے سے ذکر ِالٰہی کے معنی میں خوب غور و فکر اور تدبر کرتا ہے‘‘۔)             (باب الاذکارِ و ما یتعلّق بھا)

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری

مسند نشین خانقاہ عالیہ رحیمیہ قادریہ عزیزیہ رائے پور

ناظمِ اعلیٰ ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ

متعلقہ مضامین

اَخلاق کی درستگی کے لیے دس مسنون ذکر و اَذکار - حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ

اَخلاق کی درستگی کے لیے دس مسنون ذکر و اَذکار (3) امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں : (5۔ اللہ سے دعا کرنا او…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری جولائی 21, 2022

چاروں اَخلاق کے حصول کے لیے مسنون ذکر و اَذکار  (2)

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں : ’’(اَخلاقِ اربعہ کے حصول کے مسنون ذکر و اذکار کی اہمیت پر چوتھی حدیث:)…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری مارچ 18, 2022

تمام نیکیوں کا بنیادی اساسی اُصول؛ توحید ِالٰہی  (2)

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں : [توحید کے ان آخری دو مرتبوں کی مخالف جماعتیں] ’’... توحید کے ان آ…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری جون 13, 2021

احسان و سلوک کی ضرورت اور اہمیت  (1)

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں : ’’جاننا چاہیے کہ شریعت نے انسان کو سب سے پہلے حلال و حرام کے حوالے س…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری جولائی 10, 2021