انعاماتِ الٰہیہ اور غلطیوں کی معافی ؛ تربیت کا درست طریقہ

انعاماتِ الٰہیہ اور غلطیوں کی معافی ؛ تربیت کا درست طریقہ

وَإِذ فَرَقنا بِكُمُ البَحرَ فَأَنجَيناكُم وَأَغرَقنا آلَ فِرعَونَ وَأَنتُم تَنظُرونَ.

وَإِذ واعَدنا موسىٰ أَربَعينَ لَيلَةً ثُمَّ اتَّخَذتُمُ العِجلَ مِن بَعدِهِ وَأَنتُم ظالِمونَ

ثُمَّ عَفَونا عَنكُم مِن بَعدِ ذٰلِكَ لَعَلَّكُم تَشكُرونَ  (البقرہ: 50-52)
(اور جب پھاڑ دیا ہم نے تمھاری وجہ سے دریا کو، پھر بچا دیا ہم نے تم کو اور ڈبا دیا فرعون کے لوگوں کو۔ اور تم دیکھ رہے تھے۔ اور جب ہم نے وعدہ کیا موسیٰ سے چالیس رات کا، پھر تم نے بنا لیا بچھڑا موسیٰ کے بعد، اور تم ظالم تھے۔ پھر معاف کیا ہم نے تم کواس پر بھی، تاکہ تم احسان مانو۔) 
گزشتہ آیت میں بنی اسرائیل پر ایک بہت بڑے انعام کا تذکرہ تھا کہ انھیں فرعون کی ذلت آمیز غلامی سے نجات دلا کر آزادی اور حریت کی نعمت عطا کی گئی۔ آزادی کے بعد کسی قوم کے لیے ضروری ہوجاتا ہے کہ دی گئی تعلیم و تربیت کے مطابق شخصی تہذیب اور ملکی نظام قائم کرے، لیکن بنی اسرائیل نے اس سلسلے میں غلطیاں اور کوتاہیاں کیں۔ ان آیاتِ مبارکہ میں حضرت موسیٰ علیہ السلام نے انھیں جو تعلیم و تربیت دی تھی، اس سے متعلق انعاماتِ الٰہیہ اور اُن کی کوتاہیوں اور معافی کو یاد کرایا جا رہا ہے۔ 
وَإِذ فَرَقنا بِكُمُ البَحرَ فَأَنجَيناكُم وَأَغرَقنا آلَ فِرعَونَ: بنی اسرائیل کو ایک بڑی نعمت یاد دلائی گئی کہ جب حضرت موسیٰ علیہ السلام نے تمھارے آباؤ اجداد کو لے کر فرعون کی غلامی سے بچایا۔ وہ تمھیں مصر سے لے کر فلسطین کی طرف آرہے تھے، ان کے سامنے دریا تھا اور ان کا پیچھا کرتے ہوئے فرعون کا لشکر تھا۔ ایسی مشکل صورتِ حال میں ہم نے تمھیں نجات دلائی۔ اللہ تبارک و تعالیٰ نے اپنی قدرت سے دریا کے دو ٹکڑے کردیے۔ دریا میں خشک راستہ بن گیا اور تم لوگ بڑی آسانی سے دریا پار کر گئے۔ جب کہ فرعون اور اس کا لشکر دریا کے بیچ میں پہنچا تو اس کے دونوں ٹکڑے آپس میں مل گئے۔ اس طرح فرعون اور اس کے پورے لشکر کو اللہ تعالیٰ نے غرق کردیا۔ 
وَأَنتُم تَنظُرونَ: تم اپنی آنکھوں سے اُس کا مشاہدہ کر رہے تھے کہ جب تم پر ظلم کرنے والا طبقہ اور خدائی کا دعوے دار فرعون دریا میں غرق ہو رہا تھا۔ یقینا وہ منظر تمھیں نہیں بھولا ہوگا۔ اپنے دشمن کو اپنی آنکھوں سے ڈوبتے ہوئے دیکھنا بھی ایک طرح کا انعام ہے۔ اس سے تمھیں یقین آگیا کہ اب کوئی ہم پر ظلم کرنے والا نہیں رہا۔ اس طرح تمھیں تمام تکلیفیں اور مشقتیں بھول گئیں اور ایک نئی زندگی شروع کرنے کا موقع ملا۔ 
وَإِذ واعَدنا موسىٰ أَربَعينَ لَيلَةً: ایک اَور اہم نعمت بنی اسرائیل کو یاد دلائی گئی کہ جب اُن کی دُنیوی اور اُخروی ترقی کے لیے اللہ تبارک و تعالیٰ نے حضرت موسیٰ علیہ السلام کو طور پہاڑ پر بلایا، تاکہ انھیں تورات ایسی عظیم کتاب عطا کی جائے، جس کے ذریعے سے دنیا میں بنی اسرائیل کو حکومت اور مملکت حاصل ہو، انھیں زمین کا وارث بنایا جائے، انھیں انسانیت کے لیے مفید تہذیب یافتہ قوم بنایا جائے، یہ بڑا انعام ہے۔ 
ثُمَّ اتَّخَذتُمُ العِجلَ مِن بَعدِهِ وَأَنتُم ظالِمونَ:ـ اس موقع پر تم نے بڑی غلطی کی کہ تم نے سامری کے بھرّے (فریب) میں آکر بچھڑے کی پوجا شروع کردی، اس کے سامنے سجدہ ریز ہوگئے۔ اُس ربّ تبارک و تعالیٰ سے روگردانی کی، جس نے تمھیں فرعون سے نجات دی تھی اور تمھارے دشمن کو تمھاری آنکھوں کے سامنے دریا میں غرق کیا تھا۔ حضرت موسیٰؑ کی طور پہاڑ سے واپسی کا انتظار بھی نہیں کیا۔ ان کی دی گئی تعلیم کا پورا فہم و شعور حاصل کرکے اپنی حکومت قائم کرنے کے بجائے بچھڑے کو پوجنے لگے۔ 
ثُمَّ عَفَونا عَنكُم مِن بَعدِ ذٰلِكَ : اتنی بڑی غلطی کرنے کے باوجود بھی اللہ پاک نے تمھیں معاف کردیا۔ غلطیوں کی معافی تعلیم و تربیت کا ایک صحیح طریقہ ہے۔ انسان کو تعلیم دینے کا درست طریقہ یہ ہے کہ اُسے کام سمجھا کر کام پر لگا دیا جائے۔ اس کام کے سرانجام دینے میں اس سے عموماً دو قسم کی غلطیاں سرزد ہوجاتی ہیں: ایک یہ کہ بسا اوقات وہ پہلی مرتبہ اپنے کام کو پورا کرنے میں ناکام ہوجاتاہے۔ اس سے کام کو پورے طور پر سمجھنے میں کوتاہی ہوجاتی ہے اور وہ اُسے کر نہیں پاتا۔ دوسرے یہ کہ کام کی جو حدود مقرر کی گئی ہیں، ان کا خیال نہ رکھا جائے اور حد سے زیادہ آگے بڑھ جائے۔ 
بنی اسرائیل کو آزادی اور حریت کے بعد ذاتِ باری تعالیٰ سے تعلق قائم کرنے اور اس کی طرف سے آنے والی تعلیمات کی اساس پر حکومت قائم کرنے کی ذمہ داری دی گئی تھی۔ حضرت موسیٰ علیہ السلام طور پہاڑ پر اس لیے گئے تھے کہ اُن کے لیے ایک بہتر حکومت قائم کرنے کا نظامِ فکر و عمل کتابِ مقدس کی صورت میں لے کر آئیں۔ بنی اسرائیل نے اس کا انتظار نہیں کیا اور توحید کے نظریے کو سمجھنے میں بڑی غلطی کی۔ اللہ تعالیٰ سے اپنے تعلق کو نبھانے میں ناکام رہے۔ انھوں نے اپنے اوپر لدے ہوئے زیورات کے بوجھ کو اُتار کر پھینکا۔ اس بوجھ کو اٹھا کر سامری نے اُن کے لیے بچھڑا بنا دیا۔ اور کہا کہ ’’یہ تمھارا اور موسیٰ کا الٰہ ہے‘‘۔ (طٰہٰ: 88) اس سے توحید کی اَساس پر زندگی بسر کرنے کی نااہلیت آشکارا ہوگئی۔ اللہ تعالیٰ نے اس پہلی غلطی کو معاف کردیا، تاکہ انھیں اپنی غلطیوں سے سیکھنے کا موقع ملے اور دی گئی تعلیم کے مطابق کام کی اہلیت پیدا ہوجائے۔ 
لَعَلَّكُم تَشكُرونَ: کسی کام کو دی گئی تعلیم و تربیت کے مطابق پورے طور پر سرانجام دینا ’’شکر‘‘ کہلاتا ہے۔ اس کے لیے ضروری ہے کہ کام کرنے میں ابتدائی غلطیاں ہوجائیں تو انھیں معاف کرکے آگے بڑھا جائے۔ انسان غلطیوں سے سیکھتا ہے۔ اگر ہر غلطی پر گرفت کی جائے، سخت سزا دی جائے تو سیکھنے کا عمل متأثر ہوتا ہے۔ انبیا علیہم السلام قوموں کو آزادی اور حریت دِلا کر دنیا اور آخرت کی کامیابی کا نظام سکھانے کے لیے آتے ہیں۔ اس کے لیے ضروری ہے کہ ان کی لغزشوں کو نظرانداز کرکے آگے بڑھنے کا موقع فراہم کیا جائے، تاکہ وہ اس تعلیم کی قدر کریں۔ اللہ کا شکر ادا کریں۔ غلطی کو معاف کرکے اپنے آپ کو درست کرنے کا موقع فراہم کرنا بھی دیگر انعامات کےساتھ ایک بہت بڑا اِنعام ہے۔ 

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری

مسند نشین خانقاہ عالیہ رحیمیہ قادریہ عزیزیہ رائے پور

ناظمِ اعلیٰ ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ

متعلقہ مضامین
بنی اسرائیل کی اجتماعی تربیت کے اُمور

وَظَلَّلنا عَلَيكُمُ الغَمامَ وَأَنزَلنا عَلَيكُمُ المَنَّ وَالسَّلوىٰ ۖ كُلوا مِن طَيِّباتِ ما رَزَقناكُم ۖ وَما ظَلَمونا وَلٰكِن كانوا أَنفُسَهُم يَظلِمونَ (اور سایہ کیا ہم نے تم پر اَبر کا اور اُتارا تم پر مَن…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری جون 19, 2021

عیدالاضحیٰ کے دن کی تاریخی اہمیت

۱۰؍ ذوالحجہ ۱۴۴۱ھ / یکم؍ اگست 2020ء کو حضرت اقدس مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری مدظلہٗ نے ادارہ رحیمیہ لاہور میں خطبہ عید الاضحی دیتے ہوئے ارشاد فرمایا: ’&rsqu…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری جولائی 07, 2021

سزا و جزا کے نظام سے کوئی نہیں بچ سکتا

وَاتَّقوا يَومًا لا تَجزي نَفسٌ عَن نَفسٍ شَيئًا وَلا يُقبَلُ مِنها شَفاعَةٌ وَلا يُؤخَذُ مِنها عَدلٌ وَلا هُم يُنصَرونَ (48:2) (اور ڈرو اس دن سے کہ کام نہ آئے کوئی شخص کسی کے کچھ بھی، اور قبول نہ ہو…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری جنوری 09, 2021

اجتماعیت کے بنیادی قوانین اور خلاف ورزی کی سزا

وَإِذ قُلنَا ادخُلوا هٰذِهِ القَريَةَ فَكُلوا مِنها حَيثُ شِئتُم رَغَدًا وَادخُلُوا البابَ سُجَّدًا وَقولوا حِطَّةٌ نَغفِر لَكُم خَطاياكُم ۚ وَسَنَزيدُ المُحسِنينَ فَبَدَّلَ الَّذينَ ظَلَموا قَولًا غَيرَ الَّذي قيلَ لَهُم فَأَنزَلنا عَلَى…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری جولائی 15, 2021