جھوٹی آرزوؤں پر مبنی معاشروں کا زوال

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
اگست 25, 2022 - دروس القرآن الحکیم
جھوٹی آرزوؤں پر مبنی معاشروں کا زوال

(اور بعض ان میں بے پڑھے ہیں کہ خبر نہیں رکھتے کتاب کی‘ سوائے جھوٹی آرزوؤں کے، اور ان کے پاس کچھ نہیں، مگرخیالات۔)   (-2البقرہ: 78)

گزشتہ آیات میں یہودی علما کی دو خرابیاں بیان کی گئی تھیں: ایک یہ کہ اللہ کے کلام کو سمجھنے کے باوجود ‘اس میں جان بوجھ کر تحریف کرتے تھے۔ دوسرے یہ کہ صحیح اور سچے علم کو عام انسانوں سے چھپاتے تھے۔ ان کے سامنے من گھڑت باتیں بیان کرتے تھے۔

اس آیت میں یہودیوں کے عام عوام کی خرابی بیان کی جا رہی ہے۔ اس خرابی کی وجہ بھی دراصل یہودی علما ہی ہیں، جو اُنھیں الفاظ کے گورکھ دھندوں میں اُلجھا کر جھوٹی تمنائیں اور آرزوئیں اُن میں پیدا کرتے تھے اور پھر اُن سے کھیلتے تھے۔ انھیں فروخت کرکے اُن سے مال و دولت کماتے تھے۔

 اس آیت میں یہودیوں کے جاہل اور عام لوگوں کی دو خرابیاں بیان کی جا رہی ہیں: ایک یہ کہ وہ اللہ کی سچی کتاب تورات کا علم بالکل نہیں رکھتے۔ اس علم سے بالکل کورے اور بے پڑھے لکھے ہیں۔ اور دوسرے یہ کہ وہ صرف جھوٹی تمنائیں اور آرزوئیں رکھتے ہیں۔ ان کے علاوہ ان کے پاس اَور کچھ نہیں۔ یہودی معاشرے کی بڑی خرابیاں یہی تھیں کہ ایک طرف اُن کے علما اور اہلِ دانش لوگوں سے صحیح علم کو چھپاتے اور سچے علم میں تحریف کرتے تھے۔ دوسری طرف عام آدمی حقائق پر مبنی توراتِ مقدس کے سچے علم پر صحیح عمل کرنے کے بجائے محض تمناؤں اور آرزوؤں کے پیچھے بھاگتے تھے۔ پھر اہلِ علم و دانش اُن کی تمناؤں اور آرزوؤں کو بیچ کر اپنے مادی مفادات اور دولت حاصل کرتے تھے۔

اللہ تعالیٰ نے قرآن حکیم میں دوسری جگہ علم و عمل کی اہمیت اور لوگوں کی تمناؤں اور آرزوؤں کی نفی کرتے ہوئے فرمایا ہے کہ: ’’نہ تمھاری اُمیدوں پر مدار ہے، نہ اہل کتاب کی اُمیدوں پر۔ جو کوئی بُرا کام کرے گا، اُس کی سزا پاوے گا۔ اور نہ پاوے گا اللہ کے سوا اپنا کوئی حمایتی اور نہ اپنا کوئی مددگار۔ اور جو کوئی کام کرے اچھے، مرد ہو یا عورت اور ایمان رکھتا ہو، سو وہ لوگ داخل ہوں گے جنت میں، اور ان کا حق ضائع نہ ہوگا تِل بھر‘‘۔ (-4 النساء: 123) اس کی تشریح کرتے ہوئے حضرت مولانا شبیر احمد عثمانیؒ فرماتے ہیں:

’’کتاب والوں، یعنی یہودیوں اور نصرانیوں کو خیال تھا کہ ہم خاص بندے ہیں، جن گناہوں پر خلقت پکڑی جائے گی، ہم نہ پکڑے جائیں گے۔ ہمارے پیغمبر حمایت کرکے اُن کو بچا لیں گے۔ اور نادان اہلِ اسلام بھی اپنے حق میں یہی خیال کرلیا کرتے ہیں۔ سو فرما دیا کہ نجات اور ثواب کسی کی اُمید اور خیال پر موقوف اور منحصر نہیں۔ جو بُرا کرے گا، پکڑا جاے گا۔ کوئی ہو۔ اللہ کے عذاب کے وقت کسی کی حمایت کام نہیں آسکتی۔ اللہ جس کو پکڑے، وہی چھوڑے تو چُھوٹے‘‘۔

 جب کسی معاشرے سے علم و شعور اور اُس پر صحیح عمل ختم ہوجاتا ہے اور محض تمنائیں اور جھوٹی آرزوئیں باقی رہ جاتی ہیں، تو پھر لایعنی خیالات اور توہمات غالب آجاتے ہیں۔ حقائق کے برخلاف محض اندازے اور گمانات پیدا ہوجاتے ہیں۔ ایسی صورت میں معاشرے مزید خرابی کی طرف لُڑھکتے چلے جاتے ہیں۔

اللہ تعالیٰ نے دوسری جگہ پر مشرکین مکہ کے بارے میں فرمایا ہے کہ: ’’اُن کے پاس کچھ بھی علم نہیں ہے۔ وہ صرف گمان اور وہم کی اتباع کرتے ہیں۔ اور ظنون و اَوہام حق واضح کرنے میں کچھ بھی فائدہ نہیں دیتے‘‘۔ (-53 النجم: 28)

اسی طرح ایک اَور جگہ لوگوں پر دلائل کی روشنی میں حجت قائم کرتے ہوئے اللہ تعالیٰ نے فرمایا: ’’آپ کہہ دیجیے! کیا تمھارے پاس کچھ علم ہے؟ کہ تم اُسے ہمارے سامنے پیش کرو۔ تم تو صرف ظن و گمان کی پیروی کرتے ہو۔ اور صرف اٹکل اور تخمینے لگاتے ہو۔ کہہ دیجیے کہ (سچے علم کی بنیاد پر) اللہ کی حجت اور دلائل پورے ہوچکے ہیں‘‘۔ (-6 الانعام: 148)

ان آیات میں اللہ تبارک و تعالیٰ نے علم و شعور کی اہمیت واضح کی ہے۔ ایسا علم و شعور جو صحیح عمل اور سیدھے راستے کی رہنمائی کرے۔ اس لیے کہ انسانی معاشرے حقائق پر مبنی علم و شعور سے ہی ترقی کرتے ہیں۔ صحیح علم کی بنیاد پر کیے گئے اعمال ہی کسی قوم کی ترقی اور کامیابی کے ضامن ہوتے ہیں۔ ان آیات میں دوسری یہ حقیقت بھی واضح کی گئی ہے کہ محض تمناؤں اور آرزوؤں اور لایعنی خیالات سے کوئی قوم کامیاب نہیں ہوسکتی۔ جیسا کہ یہودی معاشرے کے ساتھ ہوا کہ حضرت موسیٰ علیہ السلام جیسے اولوالعزم پیغمبر کے اعلیٰ علم اور بہترین سیاسی نظم و نسق کے باوجود اس قوم کے علما اور عوام زوال کا شکار ہوئے۔ قوموں کی قیادت سے محروم ہوئے۔ ذلت کی اتھاہ گہرائیوں میں گر گئے۔ پستی میں چلے گئے۔

قرآن حکیم نے ان آیات میں یہودی معاشرے کی ان خرابیوںکی عکاسی کرکے دراصل مسلمانوں کے سامنے یہ حقیقت واضح کی ہے کہ اگر یہ لوگ بھی یہودیوں کے نقشِ قدم پر چلیں گے، اسی طرح علمی حقائق کے برعکس محض تمنائیں اور آرزوئیں پالیں گے، لایعنی خیالات کے اسیر ہوں گے تو ان کے لیے بھی زوال یقینی ہے۔

جب کسی قوم کے قائدین علمی حقائق مسخ کرنے لگیں اور اصل علم چھپا کر غلط اعداد و شمار کے ذریعے سے مفادات اُٹھانے لگیں، اور عام لوگ اُن کے اُلجھاؤ میں آکر محض تمنائیں پالنے لگیں، لایعنی خیالات اور فضول نظریات اور مفاد پرست جماعتوں کے پیچھے بھاگنے لگیں، تو یقینا ایسے معاشرے دنیا اور آخرت میں سوائے ذلت و رُسوائی کے اَور کچھ حاصل نہیں کرتے۔ جیسا کہ اس وقت مسلمان معاشروں کا یہی حال ہوچکا ہے۔ انھیں اپنے غلط افکار و نظریات پر نظرثانی کی ضرورت ہوتی ہے۔ یہ آیات ہمیں برانگیختہ کرتی ہیں کہ ہم بے علمی پر مبنی فرسودہ رویے چھوڑیں اور قرآنی علم و فکر سے پختہ وابستگی اور اُن میں رُسوخ پیدا کرکے صحیح نظریہ اور شعور پیدا کریں اور اپنے معاشروں کی ترقی کے لیے کردار ادا کریں۔

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری

مسند نشین خانقاہ عالیہ رحیمیہ قادریہ عزیزیہ رائے پور

ناظمِ اعلیٰ ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ

متعلقہ مضامین

بنی اسرائیل کی تربیت کا ایک اہم واقعہ

وَإِذ قالَ موسىٰ لِقَومِهِ إِنَّ اللَّهَ يَأمُرُكُم أَن تَذبَحوا بَقَرَةً ۖ قالوا أَتَتَّخِذُنا هُزُوًا ۖ قالَ أَعوذُ بِاللَّهِ أَن أَكونَ مِنَ الجاهِلينَ قالُوا ادعُ لَنا رَبَّكَ يُبَيِّن لَنا ما هِيَ ۚ قالَ إِنَّهُ يَقولُ إِنَّها بَقَرَةٌ لا ف…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری فروری 11, 2022

مشترکہ وسائل کی منصفانہ تقسیم ؛ شہری زندگی کا ایک اہم قانون

وَإِذِ استَسقىٰ موسىٰ لِقَومِهِ فَقُلنَا اضرِب بِعَصاكَ الحَجَرَ ۖ فَانفَجَرَت مِنهُ اثنَتا عَشرَةَ عَينًا ۖ قَد عَلِمَ كُلُّ أُناسٍ مَشرَبَهُم ۖ كُلوا وَاشرَبوا مِن رِزقِ اللَّهِ وَلا تَعثَوا فِي الأَرضِ مُفسِدينَ( -2 البقرہ: 60) …

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری اگست 10, 2021

اقوامِ عالم کی ترقی کے لیے دو قرآنی اُصول

20؍ اگست 2021ء کو حضرت اقدس مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری مدظلہٗ نے ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ (ٹرسٹ) لاہور میں خطبہ جمعہ دیتے ہوئے ارشاد فرمایا: ’’معزز دوس…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری ستمبر 10, 2021

عیدالاضحیٰ کے دن کی تاریخی اہمیت

۱۰؍ ذوالحجہ ۱۴۴۱ھ / یکم؍ اگست 2020ء کو حضرت اقدس مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری مدظلہٗ نے ادارہ رحیمیہ لاہور میں خطبہ عید الاضحی دیتے ہوئے ارشاد فرمایا: ’&rsqu…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری جولائی 07, 2021