ڈالر سے محبت ہی بہت ہے؟

محمد کاشف شریف
محمد کاشف شریف
فروری 11, 2022 -
ڈالر سے محبت ہی بہت ہے؟

پاکستان پر اندرونی و بیرونی قرضوں کا حجم 410 کھرب روپے کے لگ بھگ ہوچکا ہے۔ ایک سال کے دوران اس میں اوسطاً 30 کھرب روپوں کا اضافہ ہو ہی جاتا ہے۔ اس کی بڑی وجہ ہمارے اخراجات میں مستقل اضافہ ہے۔ مالی سال 2021-22ء کے نصفِ اوّل میں آمدن و اِخراجات کا یہ خسارہ بڑھ کر 1800 ارب روپے تک جا پہنچا ہے۔ حال آںکہ اسی مدت کے دوران ٹیکس وصولی نے گزشتہ تمام ریکارڈ توڑ ڈالے اور 32.5 فی صد کے اضافے سے 29 کھرب کی وصولی ریکارڈ کی گئی، لیکن پھر بھی خسارہ ریکارڈ کیا گیا۔ اس خسارے کی بڑی وجہ اندرونی اور بیرونی قرضوں کی اَقساط اور ان پر سود کی ادائیگی، عالمی منڈی میں بڑھتی ہوئی تیل کی قیمتیں، خوردنی اشیا کی درآمدات میں اضافہ اور کرونا ویکسین پر 1.4 ارب ڈالر کی ادائیگیاں ہیں۔ اہم بات یہ ہے کہ ہماری مقتدرہ بھی یہ جانتی ہے کہ ڈالر ہی میں قوت ہے، اس لیے ایسا قدم اُٹھانے سے یہ گریزاں رہتی ہے، جس میں ڈالر کی ریل پیل نسبتاً کم ہو۔

چناں چہ بیرونی قرض لینے سے ہم کبھی نہیں چوکتے۔ پاکستان میں ڈالر چار طریقوں سے آتے ہیں: ایک: برآمدات سے، دوسرا: بیرونِ ملک مقیم پاکستانیوں سے، تیسرا: سرمایہ کاری سے، چوتھا: قرض کی صورت میں۔ ہمیں سالانہ بنیادوں پر تین طریقوں سے ڈالر ادا کرنے ہوتے ہیں: ایک: قرض اور اس پر سود کی صورت میں، دوسرا: درآمدات کی ادائیگیوں کی مد میں، تیسرا: سرمایہ کاری پراصل زر اور منافع کی صورت میں۔ ہوتا یوں ہے کہ مندرجہ بالا مَدّات میں ڈالر کی آمدن ہمیشہ ادائیگیوں سے کم ہی رہتی ہے اور اس خلیج کو پاٹنے کے لیے بیرونی دنیا سے ڈالر میں قرض لیا جاتا ہے، لیکن یہ ڈالر لے کر کسے ادا کیے جاتے ہیں؟ واپس بیرونی سرمایہ کار کو، کسی عالمی مالیاتی ادارے کو یا طاقت ور درآمد کنندہ کو جو اپنی عیاشی کے لیے موبائل فون گاڑی اور تعیش کا سامان خریدنا چاہتا ہے۔ یہ طاقت ور لوگ کون ہیں؟ یہ ہمارے حکمران اور سول اور فوجی بیوروکریٹ ہیں۔ ان لوگوں کے لیے پوری قوم سالانہ بنیاد پر لگ بھگ 30 سے 40 کھرب کی مقروض ہوجاتی ہے۔

درآمدات کے اعداد و شمار کا جائزہ لیں تو معلوم ہوتا ہے کہ مالی سال 2021-22ء کے نصفِ اوّل کے دوران گاڑیوں پر 1.9 ارب ڈالر، موبائل فونز پر ایک ارب ڈالر، گندم، چینی، دالوں اور چائے پر مجموعی طور پر ایک ارب ڈالر، اور خوردنی تیل پر 1.6 ارب ڈالر خرچ کیے گئے ہیں۔ یہ برآمدات پانچ سے چھ ارب ڈالر کی بنتی ہیں۔ ان پر قابو پالیا جائے اور انھیں پاکستان میں ہی تیار کرلیا جائے تو نہ صرف قیمتی زرِ مبادلہ بچے گا، بلکہ ہماری برآمدات میں اضافے کی وجہ بھی بنے گا۔ مذکورہ شعبوں کو پاکستان میں بہ آسانی فروغ دیا جاسکتا ہے۔ کیوں کہ ان سے متعلق مقامی طلب بھی ہے اور پیداوار کا بنیادی ڈھانچہ بھی، لیکن حکومت کا حالیہ اعلان کہ پاکستان کی معیشت اب 295 ارب ڈالر سے بڑھ کر 345 ارب ڈالر تک جا پہنچی ہے، مزید قرض لینے کی راہ ہموار کرنے کا پیش خیمہ ہے۔ گویا ہماری مقتدرہ کا موڈ قرضوں پر زندہ رہنے کا ہے۔ کیوں کہ ڈالر سے محبت ہی اصل ایمان ہے؟!

متعلقہ مضامین

وسط مدتی رپورٹ  (2)

4۔ سالانہ پیداوار: پاکستان آبادی کے لحاظ سے دنیا کا پانچواں بڑا ملک ہے۔ مقامی پیداوار کا ایک بہت بڑا حصہ مقامی سطح پر ہی استعمال ہو جاتا ہے، لیکن اس عمل کو مستحکم ہونے ک…

محمد کاشف شریف مئی 16, 2021

خودمختار مرکزی بینک؟

غلامی کے بھی کئی ڈھنگ ہوتے ہیں۔ ضروری نہیں ہے کہ کسی کو قید ہی کرلیا جائے تو وہ غلام قرار پائے گا۔ گزشتہ اڑھائی سو سال میں جہاں ہمارے آقاؤں نے اجارہ داری اور آدابِ حکمران…

محمد کاشف شریف جون 14, 2021

معاشی پھیلاؤ کا بجٹ

آمدہ سال حکومت 131 کھرب روپے خرچ کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ اس مقصد کے لیے خود حکومتی اندازے کے مطابق قریباً 79 کھرب روپے وصول کیے جاسکیں گے۔ باقی رقم اندرونی اور بیرونی قرض…

محمد کاشف شریف جولائی 08, 2021

وسط مدتی رپورٹ

موجودہ حکومت کے اقتدار میں آنے کے بعد ملکی معاشی ڈھانچے میں بہتری اور اس کے نتیجے میں معاشی ترقی کا خواب شرمندۂ تعبیر ہونے کے بیانیے میں کتنی حقیقت ہے؟ اس بات کا اندازہ …

محمد کاشف شریف اپریل 27, 2021