قرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی

محمد کاشف شریف
محمد کاشف شریف
مارچ 18, 2022 -
قرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی

پاکستان کو موجودہ مالی سال کے آمدہ چار ماہ میں قرضوں کی ادائیگی اور اپنی ضروریات کے لیے 10 ارب ڈالر کا اضافی قرض درکار ہے اور آمدہ مالی سال کے دوران انھی مدات میں 20 سے 25 ارب ڈالر درکار ہوں گے۔ قرض اور اس پر سود کی ادائیگی محنت کی کمائی سے کردی جائے تو گویاقرض لینے کی بنا پرعزت و وقار میں کمی کا ازالہ ہو، لیکن پاکستان ایسے کام نہیں کرتا۔ یہاں کے ذمہ داران اس ہمالیائی ہدف کو حاصل کرنے کے لیے ایک اَور منصوبہ بنا چکے ہیں۔

گزشتہ تین سالوں میں ہم نے مشاہدہ کرلیا کہ ہمارے بہترین ذہن، یعنی بیوروکریٹس اور قومی سرمایہ دار کمیشن‘ اُوپر کی کمائی اور بلیک میلنگ کے ماہر ہیں۔ انھوں نے کمال مہارت سے مراعات بھی لے لیں، کام بھی نہ ہونے کے برابر کیا۔ اور آج ملک تقریباً وہیں کھڑا ہے، جہاں سے چلے تھے۔ مہنگائی کا ایک طوفان ہے، جو تھمنے کا نام نہیں لیتا، لیکن ان کا معیارِ زندگی اور کاروباری منافع تاریخی ریکارڈ توڑ رہے ہیں۔ ریکارڈ توڑنے کی ریت چل ہی نکلی ہے تو صاحب لوگوں نے سوچا کہ قرض لینے کا ریکارڈ بھی بنا لیا جائے۔ چناں چہ ڈیٹ لیمیٹیشن ایکٹ(Debt Limitation Act)منظور کرلیا گیا ہے۔ اس کے مطابق حکومتِ پاکستان سالانہ قومی پیداوار کا 60 فی صد قرض لے سکتی ہے اور 10 فی صد تک کی ریاستی ضمانتیں جاری کرسکتی ہے۔

ایسا نہیں ہے کہ ہمارے لیڈران اور افسران نے اس طے شدہ حد سے کم قرض لیا ہوا تھا اور اب اس ایکٹ کی منظوری کے بعد مزید قرض لیا جائے گا۔ حقیقت یہ ہے کہ پہلے سے موجود قانون کے مطابق پاکستان پر سالانہ پیداوار کا 60 فی صد قرض ہی چڑھایا جاسکتا تھا، لیکن قانون میں ہمارے لیڈران کے پاس صوابدیدی اختیارات نہیں تھے۔ اب وہ اختیارات انھیں دے دیے گئے ہیں، جن کے مطابق ضرورت کا تعین قانون میں دیے گئے ممکنات نہیں ہوں گے، بلکہ ہمارے محبوب لیڈرز اور افسرانِ بالا کی سمجھ بوجھ ہوگی، تاکہ ملک معاشی مشکلات کا شکار نہ ہونے پائے اور فیصلہ فوراً ہو جائے۔

یہ آخری جملہ ازراہِ تفنن بیان نہیں کیا گیا۔ ہمارا دوہرا مسئلہ ہے کہ امریکا یا برطانیہ کے قانون کا چھاپہ لگاتے ہوئے ہمارے یہ بڑے ذہن یہ بھی نہیں سوچتے کہ وہ ممالک یوں ہی ترقی نہیں کرگئے۔ وہاں بنے ہوئے قوانین کا بغیر معروضیت کو مد ِنظر رکھے، اطلاق پاکستانی مقتدرہ کے پاؤں کی بیڑیاں بن جائے گا اور اُس قانون کو پہلی دفعہIMFہی مکمل پڑھے گا اور ہمارے فیصلہ ساز وہیں پھنس جائیں گے۔

حقیقت یہ ہے کہ اس قانون کے مسودے کے ساتھ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ پاکستان پر کُل قرض دراصل سالانہ پیداوار کا 72 فی صد ہے اور ریاستِ پاکستان نے 6 فی صد کے لگ بھگ ضمانتیں بھی جاری کی ہوئی ہیں۔  

گویا بھائی لوگ پہلے سے ہی حد پار کرچکے ہیں اور ابIMFوغیرہ کے کہنے پر یہ قانون سازی ہورہی ہے۔ اور اس دفعہ تھوڑا سا سوچ لیا گیا ہے اور نئے قانون میں مستقبل کی پیش بندی کرلی گئی ہے۔ اس کے ساتھ ہی پاکستان کی سالانہ پیداوار کو 295 ارب ڈالر سے بڑھا کر 345 ارب ڈالر کرلیا گیا ہے اور قومی ادارےState Owned Enterprises (SOEs)کو خودمختار کرنے کا قانون بھی آیا چاہتا ہے۔ کیوں کہ ان اداروں کی ضمانتی ادائیگیاں 5000 ارب روپے سے تجاوز کرچکی ہیں۔ ایسا نہیں ہے کہIMFاس میں شامل نہیں ہے۔ اتنی عقلIMFمیں ہی ہے، کیوں کہ مزید قرض جو دینا ہے۔

متعلقہ مضامین

1997ء ایشیائی کرنسی بحران میں پاکستان کے لیے سبق

1997ء میں ایشیائی کرنسی بحران میں مشرقِ بعید کے تمام ممالک خاص طور پر‘ اور دُنیا کے دیگر ممالک عام طور پر ان پالیسیوں کی وجہ سے متأثر ہوئے تھے، جنھیں آج کا پاکستان ب…

محمد کاشف شریف جون 11, 2022

معاشی آزادی کی قیمت

رُوس اور یوکرین جنگ نے دیگر ممالک کی طرح پاکستان کو اس سے پیدا ہونے والے معاشی چیلنجز کے بھنورپر لاکھڑا کیا ہے۔ اس جنگی ماحول میں وزیر اعظم کا روس پہنچنا اور اندرونِ ملک ع…

محمد کاشف شریف اپریل 12, 2022

اور آئی ایم ایف پھر مان گیا

آئی ایم ایف کی عالمی حیثیت ایک بینک کی سی ہے، جس کا کام دیگر ممالک کو اس لیے قرض دینا ہے، تاکہ لین دین کا عالمی نظام اضمحلال کا شکار نہ ہونے پائے اور اس تناظر میں مقامی …

محمد کاشف شریف مارچ 14, 2021

عالمی مالیاتی بحران ابھی ٹلا نہیں

ڈچ ایسٹ انڈیا کمپنی، برٹش ایسٹ انڈیا کمپنی نے جدید مالیاتی نظام کی بنیاد رکھی تھی۔ مشترکہ سرمائے کی طاقت سے ان کمپنیوں نے برصغیر، مشرقِ بعید اور چین میں سترہویں اور اٹھار…

محمد کاشف شریف نومبر 15, 2021