بنی اسرائیل کی تربیت کا ایک اہم واقعہ

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
فروری 11, 2022 - دروس القرآن الحکیم
بنی اسرائیل کی تربیت کا ایک اہم واقعہ

وَإِذ قالَ موسىٰ لِقَومِهِ إِنَّ اللَّهَ يَأمُرُكُم أَن تَذبَحوا بَقَرَةً ۖ قالوا أَتَتَّخِذُنا هُزُوًا ۖ قالَ أَعوذُ بِاللَّهِ أَن أَكونَ مِنَ الجاهِلينَ

قالُوا ادعُ لَنا رَبَّكَ يُبَيِّن لَنا ما هِيَ ۚ قالَ إِنَّهُ يَقولُ إِنَّها بَقَرَةٌ لا فارِضٌ وَلا بِكرٌ عَوانٌ بَينَ ذٰلِكَ ۖ فَافعَلوا ما تُؤمَرونَ

(اور جب کہا موسیٰ نے اپنی قوم سے: اللہ تعالیٰ فرماتا ہے تم کو: ذبح کرو ایک گائے۔ وہ بولے: کیا تُو ہم سے ہنسی کرتا ہے؟ کہا: پناہ خدا کی کہ ہُوں مَیں جاہلوں میں۔ بولے کہ: دعا کر ہمارے واسطے اپنے ربّ سے کہ بتا دے ہم کو کہ وہ گائے کیسی ہے؟ کہا: وہ فرماتا ہے کہ: وہ گائے ہے، نہ بوڑھی اور نہ بِن بیاہی، درمیان میں ہے بڑھاپے اور جوانی کے۔ اب کر ڈالو جو تم کو حکم ملا ہے۔)  (-2 البقرہ: 67-68)

گزشتہ آیات میں بتلایا گیا تھا کہ بنی اسرائیل کی اجتماعی زندگی کی ترقی کے لیے ہفتے کا دن اللہ تعالیٰ کی عبادت اور دینِ حق کی اجتماعیت کے لیے مقرر کیا گیا تھا۔ اس قانون کی پابندی سے اُن کی ترقی کا راستہ کھلتا تھا۔ انھوں نے اس کی خلاف ورزی کی۔ اس قانون شکنی کی سزا کے طور پر انھیں انسانیت سے نچلے درجے میں بندر بنا دیا گیا۔

ان آیاتِ مبارکہ (67 تا 73) میں گائے کے ذبح کا واقعہ بیان کیا گیا ہے۔ اس واقعے کے ضمن میں بنی اسرائیل کی تعلیم و تربیت اور قومی ترقی کے لیے اللہ تعالیٰ کے انعام کا تذکرہ کیا جا رہا ہے۔ اس کے ذریعے سے ان کے دلوں میں تعلق مع اللہ، اس کے احکامات کی پابندی اور انسانی حقوق کی پاسداری کی حقیقت واضح کی جا رہی ہے۔

وَإِذ قالَ موسىٰ لِقَومِهِ: تمام انبیا علیہم السلام اپنی قوم کی تعلیم و تربیت اور قومی ترقی کے لیے دنیا میں مبعوث کیے گئے ہیں۔ بنی اسرائیل کی قومی ترقی اور روحانی سربلندی کے لیے حضرت موسیٰ علیہ السلام بھیجے گئے۔ اللہ تعالیٰ نے اُن کے ذریعے سے اس قوم پر انعامات کی بڑی بارش کی۔ انھوں نے ہر اہم مرحلے پر اُن کی قومی اجتماعیت کو برقرار رکھنے کے لیے کردار ادا کیا۔ حضرت الامام شاہ ولی اللہ دہلویؒ فرماتے ہیں کہ: ’’ساس بنی اسرائیل سیاسۃً حسنۃً‘‘ (تاویل الاحادیث) (حضرت موسیٰ علیہ السلام نے بنی اسرائیل کی سیاست بہت عمدہ طریقے سے کی)۔ سیاست کا بنیادی ہدف کسی قوم کی اجتماعی شیرازہ بندی کو مضبوط بنانا اور مجموعی طور پر انھیں ترقی دینا ہوتا ہے۔ ایسی شیرازہ بندی‘ قوانین کی پابندی کے بغیر نہیں ہوسکتی اور قوانین کا بنیادی مقصد مالی بدعنوانیوں اور جسمانی ظلم و ستم سے سوسائٹی کو پاک کرنا ہوتا ہے۔ انبیا علیہم السلام اسی کے ساتھ ساتھ اللہ سے سچے تعلق اور اُس کی تجلیات کے نظام کے ساتھ انسانیت کو مربوط بنانے کے لیے آتے ہیں۔ اس تناظر میں حضرت موسیٰ علیہ السلام نے اُن سے کہا کہ:

إِنَّ اللَّهَ يَأمُرُكُم أَن تَذبَحوا بَقَرَةً ۖ  : اللہ تعالیٰ تمھیں حکم دیتا ہے کہ تم گائے ذبح کرو۔ حضرت موسیٰ علیہ السلام نے بنی اسرائیل کی خرابیوں کو سمجھا۔ اُن میں سے ایک بڑی خرابی جو فرعون کے زیر اثر قبطیوں اور مصریوں کے ذریعے سے اُن میں دَر آئی تھی، وہ گائے اور بچھڑے کی پرستش کا عقیدہ تھا، جیسا کہ ہندوؤں میں گائے کی پوجا کا عقیدہ پایا جاتا ہے۔ اس واقعے کے ذریعے سے ان میں گائے کی تقدیس کا جو تصور پایا جاتا تھا، اُس کا رد کرنا اور انھیں تجلی الٰہی کے ساتھ جوڑنا مقصود تھا۔ پھر مال کے لالچ میں ایک آدمی کو اُس کے چچازاد بھائیوں نے قتل کردیا تھا۔ اس طرح انھوں نے اجتماعی قانون کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مال اور جان کی حرمت کی پامالی کی تھی۔ اس آیت میں اس پر تنبیہ ہے۔ 

قالوا أَتَتَّخِذُنا هُزُوًا ۖ  : صدیوں سے قبطیوں اور مصریوں کی صحبت میں رہنے کے نتیجے میں بنی اسرائیلیوں کو اپنے فرسودہ خیال کے مطابق ’’مقدس گائے‘‘ ذبح کرنے کا حکم بڑا عجیب لگا۔ اُن کے وہم و گمان میں بھی نہ تھا کہ گائے کی تقدیس کا عقیدہ ذہن میں رکھتے ہوئے اُسے ذبح بھی کیا جاسکتا ہے۔ اس لیے انھوں نے حضرت موسیٰ علیہ السلام کے بارے میں یہ سمجھا کہ شاید وہ ہمارے ساتھ مذاق کر رہے ہیں۔ اور کہا کہ کیا آپ گائے کے ذبح کا حکم دے کر ہمارے ساتھ مذاق کر رہے ہیں؟

قالَ أَعوذُ بِاللَّهِ أَن أَكونَ مِنَ الجاهِلينَ : حضرت موسیٰ علیہ السلام نے واضح کیا کہ اوّل تو میں اللہ کی پناہ میں آتا ہوں۔ نبی کبھی ایسا کام نہیں کرتے، جو اللہ کے حکم کے بغیر ہو۔ دوسرے یہ کہ مذاق اور ٹھٹھا کرنا جاہلوںکا کام ہوتا ہے۔ جو لوگ علم اور دانش نہیں رکھتے، وہ فضول کاموں، ٹھٹھا اور مذاق میں مشغول ہوجاتے ہیں۔ حضرت شیخ الہند مولانا محمودحسنؒ فرماتے ہیں: ’’ٹھٹھا کرنا احمق جاہل کا کام ہے اور وہ بھی احکامِ شرعیہ میں۔ پیغمبر سے یہ ہرگز ممکن نہیں‘‘۔ اس پر انھیں تنبیہ ہوئی کہ یہ مذاق نہیںہے، بلکہ واقعی اللہ کا حکم ہے کہ گائے ذبح کی جائے۔ اس سے بھاگنے کا کوئی راستہ نہیں۔

قالُوا ادعُ لَنا رَبَّكَ يُبَيِّن لَنا ما هِيَ ۚ  : ایک جاہل اور غلط تصورات کے اسیر افراد کا حال ایسا ہی ہوتا ہے کہ کوئی حکم سمجھ میں نہ آئے تو سوالات کی بوچھاڑ کرتے ہیں۔ بنی اسرائیل نے اس موقع پر حضرت موسیٰ علیہ السلام سے چند سوالات کیے۔ شاید کہ اس حکم سے جان چھوٹ جائے۔ اس لیے انھوں نے پہلا سوال کیا کہ ہمارے سامنے گائے کی حالت واضح کی جائے ، یا ہمیں سمجھایا جائے، تا کہ قانون کی سمجھ اور فہم پیدا ہوجائے۔

قالَ إِنَّهُ يَقولُ إِنَّها بَقَرَةٌ لا فارِضٌ وَلا بِكرٌ عَوانٌ بَينَ ذٰلِكَ ۖ  :  حضرت شیخ الہندؒ فرماتے ہیں کہ: انھوں نے پہلا سوال کیا ’’یعنی اس (گائے) کی عمر کتنی ہے؟ اس کے حالات کیا ہیں؟ نوعمر ہے یا بوڑھی؟‘‘ حضرت موسیٰ علیہ السلام نے کہا کہ وہ نہ بوڑھی ہو اور نہ ہی جوان۔ درمیانی عمر کی ہو۔ یعنی عمر اور حالت سے زیادہ اس چیز پر توجہ دو کہ اللہ کی طرف سے جو تمھیں حکم دیا گیا ہے، اس کو کرگزرو۔

فَافعَلوا ما تُؤمَرونَ: اس پہلے سوال کے جواب میں انھیں گائے کے ذبح کرنے کا دوبارہ تاکیدی حکم دیا گیا۔ اس جواب سے اُن کا ’’حجابِ طبعی‘‘ توڑا گیا کہ گائے کے ذبح کرنے کے حوالے سے اُن کی طبیعت پر جو پردے چڑھے ہوئے ہیں، وہ ختم ہوں، اور حکم دیا گیا کہ فرمانِ الٰہی کو دل و جان سے پورا کیا جائے۔

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری

مسند نشین خانقاہ عالیہ رحیمیہ قادریہ عزیزیہ رائے پور

ناظمِ اعلیٰ ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ

متعلقہ مضامین

تہذیبِ نفس کے عہد و میثاق کی خلاف ورزی

گزشتہ آیات (البقرہ: 80-82) میں یہودیوں کی تحریفات، ظنون و اَوہام اور ظلم و فساد کا تذکرہ تھا۔ اس آیتِ مبارکہ (البقرہ: 83) سے یہ حقیقت واضح کی جا رہی ہے کہ بنی اسرائیل کو …

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری نومبر 11, 2022

بنی اسرائیل پر ذلت، مسکنت او رغضب ِالٰہی کا عذاب

وَضُرِبَت عَلَيهِمُ الذِّلَّةُ وَالمَسكَنَةُ وَباءوا بِغَضَبٍ مِنَ اللَّهِ ۗ ذٰلِكَ بِأَنَّهُم كانوا يَكفُرونَ بِآياتِ اللَّهِ وَيَقتُلونَ النَّبِيّينَ بِغَيرِ الحَقِّ ۗ ذٰلِكَ بِما عَصَوا وَكانوا يَعتَدونَ (-2 البقرہ: 61) (اور ڈالی گئی…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری اکتوبر 10, 2021

بنی اسرائیل کے لیے قومی اور ملکی سطح کا اجتماعی نظام

وَإِذ قُلتُم يا موسىٰ لَن نَصبِرَ عَلىٰ طَعامٍ واحِدٍ فَادعُ لَنا رَبَّكَ يُخرِج لَنا مِمّا تُنبِتُ الأَرضُ مِن بَقلِها وَقِثّائِها وَفومِها وَعَدَسِها وَبَصَلِها ۖ قالَ أَتَستَبدِلونَ الَّذي هُوَ أَدنىٰ بِالَّذي هُوَ خَيرٌ ۚ اهبِطوا مِصرًا فَ…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری ستمبر 10, 2021

یہودی اہلِ علم کی پہلی خرابی؛ تحریف ِکلام اللہ

۞ أَفَتَطْمَعُونَ أَن يُؤْمِنُوا۟ لَكُمْ وَقَدْ كَانَ فَرِيقٌۭ مِّنْهُمْ يَسْمَعُونَ كَلَـٰمَ ٱللَّهِ ثُمَّ يُحَرِّفُونَهُۥ مِنۢ بَعْدِ مَا عَقَلُوهُ وَهُمْ يَعْلَمُونَ ٧٥ (اب کیا تم اے مسلمانو! توقع رکھتے ہو کہ وہ مانیں تمھاری بات، اور…

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری جون 11, 2022