انسانی کامیابی اور ترقی کے چار بنیادی اَخلاق  (3)

مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
اکتوبر 19, 2020 - افکار شاہ ولی اللہؒ
انسانی کامیابی اور ترقی کے چار بنیادی اَخلاق  (3)

انسانی کامیابی اور ترقی کے چار بنیادی اَخلاق  (3)

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں :

چوتھا بنیادی خُلق؛ عدالت

’’چوتھا خُلق عدالت ہے۔

(عدالت کی تعریف)

وہ انسانی نفس میں ایسی صلاحیت اور مَلکہ کا ہونا ہے کہ جس کی وجہ سے کسی ملک یا کسی محلے کا نظام قائم کرنے سے متعلق اعمال و افعال سہولت کے ساتھ سرانجام پاتے ہوں۔ اس خُلق کی وجہ سے انسان کی روح فطری طور پر ایسے عادلانہ افعال سرانجام دے۔

(خُلقِ عدالت سے آخرت میں کامیابی کا راز)

اس خُلقِ عدالت کے سبب سے انسان کے لیے آخرت میں حقیقی کامیابی حاصل ہونے میں ایک راز ہے۔ اللہ تبارک و تعالیٰ نے کائنات کی تخلیق کے وقت اس کے نظام کو درست رکھنے کا ارادہ فرمایا۔ یہ ارادۂ الٰہی فرشتوں اور جسم سے جدا ہوجانے والی روحوں میں منقش ہوجاتا ہے۔ اس کے نتیجے میں اُن فرشتوں اور روحوں کی مرضیات میں ایک انقلاب برپا ہوجاتا ہے۔ وہ عدل کے نظام کی مناسبت سے کام کرنے لگتی ہیں۔ جسم سے جدا ہوجانے والی روح کا یہ طبعی تقاضا بن جاتا ہے۔

چناںچہ جب کوئی روح اپنے جسم سے جدا ہوجاتی ہے اور دنیا میں رہتے ہوئے اُس میں عدل و انصاف کا ایسا خُلق موجود ہوتا ہے تو ملائِ اعلیٰ میں پہنچ کر بہت زیادہ خوش ہوتی ہے۔ اس طرح اُسے عدل و انصاف پر مبنی اعلیٰ قسم کی لذت حاصل کرنے کا راستہ مل جاتا ہے، جو ظلم اور ناانصافی پر مبنی پست قسم کی لذتوں سے بالکل جدا ہوتی ہے۔

اگر کوئی روح جسم سے جدا ہوئی اور اُس میں عدالت کے اس خُلق کی ضد ظلم کی بداَخلاقی موجود ہوتی ہے تو وہاں پہنچ کر اس کا حال بہت بُرا ہوتا ہے۔ اسے وہاں وحشت ہوتی ہے اور وہ بڑی تکلیف میں مبتلا ہوتی ہے۔

(نبی اکرمؐ کی بعثت کے مقاصد)

اللہ تبارک و تعالیٰ نے دنیا میں نبی اکرم ﷺ کو اس لیے بھیجا ہے کہ آپؐ:

(الف)  لإقامۃ الدّین:دین کا نظام قائم کریں۔

(ب)         لِیُخرج النّاسَ مِن الظّلمات إلٰی النُّور:انسانوں کو ظلمتوں سے نکال کر نور اور روشنی کی طرف لے جائیں۔

(ج)        یقومُ النّاس بالعدل: انسانوں میں عدل و انصاف قائم کریں۔

اب جو آدمی اس نورِ عدالت کو دنیا میں پھیلانے کی جدوجہد کرتا ہے اور لوگوں کو اس کام کے لیے تیار کرتا ہے تو ایسا انسان اللہ کی رحمت میں داخل ہوجاتا ہے۔ اور جو آدمی عدل و انصاف کے اس بہترین نظام کو رد کرنے اور اس کو مٹانے کے لیے کام کرے، وہ ملعون اور سزا یافتہ قرار پائے گا۔

(عادل انسان اور فرشتوں کے درمیان باہمی اشتراکِ فکر و عمل)

جب کسی انسان میں خُلقِ عدالت اچھی طرح پختہ ہوجاتا ہے تو اُس کے درمیان اور عرشِ الٰہی کو اُٹھانے والے فرشتوں اور حضرتِ بارگاہِ الٰہیہ کے وہ مقرب فرشتے __ جو دنیا میں جود و سخاوت اور برکاتِ الٰہیہ کے نازل کرنے کا واسطہ بنتے ہیں __ کے درمیان اشتراکِ فکر و عمل پیدا ہوجاتا ہے۔

اس اشتراک کے نتیجے میں عدل و انصاف قائم کرنے والے آدمی اور اُن فرشتوں کے درمیان ایک دروازہ کھل جاتا ہے۔ اس طرح انسان میں یہ استعداد پیدا ہوجاتی ہے کہ اُن فرشتوں کے نورانی رنگ اُس پر نازل ہوں اور وہ اُن کے رنگ میں رنگا جائے۔ کچھ اس طرح پر کہ فرشتوں کے الہام کے نتیجے میں اُس میں اس خُلقِ عدالت کو پورا کرنے کی پوری قدرت اور طاقت حاصل ہوجاتی ہے۔ وہ انسانی نظام درست کرنے کے لیے فرشتوں کے حسب ِمنشا کام کرنے کے لیے اُٹھ کھڑا ہوتا ہے۔

اَخلاقِ اربعہ کا نتیجہ؛ فقیہ اور باشعور ہونا

(الف)     اگر تم تحقیقی طور پر ان چاروں اَخلاق کی حقیقت سے واقف ہوگئے ۔

(ب)       اگر تم اس کے نتیجے میں علمی اور عملی کمال پیدا ہونے کی پوری کیفیت اور فرشتوںکی لڑی میں پروئے جانے کے عمل کو سمجھ گئے۔

(ج)        اگر تم اس کے نتیجے میں ہر زمانے میں شرائعِ الٰہیہ کے وجود میں آنے کی کیفیت کو پوری ذہانت کے ساتھ واقف ہوگئے۔

تو تمھیں بہت بڑی خیرِ کثیر اور بھلائی حاصل ہوگئی۔ اور تم دین کی تعلیمات میں ایک ایسے فقیہ اور باشعور فرد بن گئے کہ جن کے بارے میں اللہ نے خیر اور بھلائی کا ارادہ کیا ہوا ہے۔

اَخلاقِ اربعہ کا مجموعہ ؛ فطرتِ انسانی

ان چاروں اَخلاق سے مرکب ہونے والی حالت کو ’’فطرت‘‘ کہا جاتا ہے۔

اس فطرت کو حاصل کرنے کے کچھ اسباب ہیں:

(الف)     بعض علمی اسباب ہیں۔

(ب)       بعض عملی اسباب ہیں۔

اس فطرت سے انسانوں کو روکنے والے کچھ حجابات اور رُکاوٹیں ہیں۔

ان حجابات کو توڑنے کے کچھ طریقے ہیں۔

ہم چاہتے ہیں کہ ہم تمھیں ان تمام اُمور پر متنبہ کریں۔

اس لیے ضروری ہے کہ اللہ تبارک و تعالیٰ کی توفیق سے اس حوالے سے جو باتیں ہم بیان کریں، تم انھیں توجہ کے ساتھ سنو اور عمل پیرا ہو۔‘‘

(باب الاصول الّتی یرجع إلیہا تحصیل الطّریقۃ الثّانیۃ)

ٹیگز
کوئی ٹیگ نہیں
مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری
مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری

مسند نشین خانقاہ عالیہ رحیمیہ قادریہ عزیزیہ رائے پور

ناظمِ اعلیٰ ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ