سیّدنا عبدالملک بن مروانؒ

سیّدنا عبدالملک بن مروانؒ

پچھلے دنوں ایک دعائیہ تقریب میں ایک ’’عالمی مبلغ‘‘ نے جھوٹی اور موضوع روایات کا سہارا لے کر خلفائے بنواُمیہ کی کردار کشی کی اور ایسے جھوٹے واقعات ذکر کرکے اَخلاف کو اَسلاف سے بدظن کرنے کی ناکام کوشش کی۔ جب کہ حقیقت یہ ہے کہ خلفائے بنواُمیہ کا دور تاریخِ اسلام کا سنہری دور ہے۔ خصوصاً عبدالملک بن مروانؒ کا دور اسلامی فتوحات کا دور ہے۔ امن و امان، معاشی خوش حالی اور دین کی سربلندی کا زمانہ ہے، جس میں ’’مؤطا امام مالک‘‘ کو اسلامی دستور ہونے کی حیثیت حاصل رہی۔

عبدالملک بن مروانؒ خود بھی عالم و فاضل، عابد و زاہد اور مدینہ کے مشہور فقہا میں سے تھے۔ بڑے بڑے ائمہ کرام ان کے علمی و عملی کمالات کے معترف ہیں۔ مثلاً امام شعبیؒ جو کہ عظیم محدث، صحاح ستہ کے ثقہ راوی اور کئی صحابہؓ کے شاگرد ہیں، وہ کہتے ہیں کہ: ’’میں نے جس کسی سے گفتگو کی، اپنے آپ کو اس سے برتر پایا، سوائے عبدالملک کے، کہ اس کے ساتھ کبھی حدیث یا شعر پر گفتگو ہوئی تو ا س نے میرے علم میں اضافہ کیا‘‘۔ محدث ابوالزنادؒ کہتے ہیں کہ: ’’سعید بن مسیبؒ، عبدالملک بن مروانؒ، عروہ بن زبیرؒ اور قبیصہ بن زویبؒ فقہائے مدینہ ہیں‘‘۔ عُبادہ بن مثنیٰؒ نے صحابیٔ رسول حضرت عبداللہ بن عمرؓ سے پوچھا کہ آپ لوگوں کے بعد ہم مسائل کس طرح (کس سے) دریافت کریں؟ تو انھوں نے فرمایا کہ: ’’مروان کے بیٹے فقیہ ہیں، ان سے دریافت کرنا‘‘۔ امام ذہبیؒ کہتے ہیں کہ: ’’عبدالملکؒ نے حضرت عثمانؓ، حضرت ابوہریرہؓ، حضرت ابوسعید خدریؓ، حضرت اُمِ سلمہؓ، حضرت ابنِ عمرؓ اور حضرت امیرمعاویہؓ سے احادیث سنیں‘‘۔ اور بقول شاہ معین الدین ندویؒ: ’’اگر وہ حکمران نہ ہوتے تو وہ مدینہ کی مسند ِعلم کی زینت ہوتے‘‘۔ علم و فضل میں یکتائے روزگار ہونے کے ساتھ ساتھ وہ ایک بہادر و کامیاب حکمران بھی تھے۔ اندرونِ ملک بغاوتوں اور شورشوں کو ختم کرکے ملک کو سیاسی لحاظ سے مستحکم کیا۔ فتوحات سے سلطنت کو وسعت بخشی۔ انھیں کے زمانے میں شمالی افریقا میں فتوحات کا آغاز ہوا۔ ترکستان اُموی خلافت کا حصہ بنا۔ رومیوں کو قیساریہ کے مقام پر شکست دے کر بہت سے رومیوں کے علاقے اسلامی حکومت کے زیرِنگیں آئے۔

حضرت عمرؓ کے زمانے میں جب ایران، شام اور افریقا کے کچھ علاقے فتح ہوئے، لیکن بعض انتظامی دُشواریوں کی وجہ سے دفتری نظام علاقائی زبانوں میں ہوتا تھا۔ ایران اور عراق میں پہلوی زبان رائج تھی۔ شام میں سریانی اور مصر میں قدیم مصری زبان کا رواج تھا تو عبدالملک کے زمانۂ خلافت میں عربی زبان کو دفتری زبان کے طور پر رائج کیا گیا، جس سے قومی وحدت کے تصور کو فروغ ملا۔ ان کا ایک بڑا کارنامہ اسلامی سِکّوں اور زَرِی کرنسی کا اِجرا بھی ہے، جس سے تجارت میں سہولت ہوئی۔ ملکی معیشت مستحکم ہوئی اور خوش حالی میں اضافہ ہوا۔ خانۂ کعبہ کی ازسرِنو تعمیر کی اور ہر سال کعبہ پر نیا غلاف چڑھانے کی رسم کا آغاز ہوا۔ یہ ریشمی غلاف ہر سال دمشق سے روانہ کیا جاتا تھا۔

مختصر یہ کہ تاریخ کے اوراق ان کے کارناموں سے معمور ہیں، لیکن افترا پرداز لوگ ضعیف ترین، بلکہ موضوع روایات کا حوالہ دے کر تاریخ اسلام کو مسخ کرنے کی ناکام کوشش کر رہے ہیں۔ بنواُمیہ کے خلفا تو انسانی خدمت اور اپنے علمی و عملی کارناموں کی بدولت دُنیا میں بھی سُرخ رُو ہوئے اور برزخی و اُخروی زندگی میں بھی ان شاء اللہ سُرخ رُو ہوں گے، البتہ ایسے عادل حکمرانوں پر الزام تراشی کرنے والے ہی رُوسیاہ ہوں گے۔

مفتی محمد اشرف عاطف
مفتی محمد اشرف عاطف

استاذ الحدیث و الفقہ ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ لاہور

متعلقہ مضامین

اُم المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا اور رمضان المبارک کی دینی و تربیتی سرگرمیاں

اُم المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کا حضور اقدس سے 10نبوی میں نکاح ہوا۔ آپؓ درس گاہِ نبوی سے براہ راست فیض یاب ہوئیں۔ آپؓ انتہائی ذہین اور حاضر جواب تھیں۔ نہایت سخی…

مولانا قاضی محمد یوسف اپریل 17, 2021

سیّدہ زینب رضی اللہ عنہا بنت محمدصلی اللہ علیہ وسلم

حضرت زینبؓ آںحضرت ﷺ کی سب سے بڑی صاحبزادی تھیں۔ آپؓ بعثتِ نبویؐ سے دس برس پہلے پیدا ہوئیں۔ اس وقت آپؐ کی عمر 30 برس تھی۔ آپؓ اوّلین مسلمان ہونے والوں میں سے تھیں۔ مشرکین مکہ کی…

مولانا قاضی محمد یوسف فروری 17, 2021

یورپ میں بنواُمیہ کی فتوحات اور علوم و فنون کی ترقی

تاریخ میں بنواُمیہ کا دورِ حکومت سیاسی اور دینی وحدت کے اعتبار سے سنہری اور فتوحات کا دور تھا۔ اُموی خلیفہ ولید بن عبدالملک کے دور میں موسیٰ بن نُصَیرافریقا کے گورنر تھے۔ طارق…

مفتی محمد اشرف عاطف جنوری 09, 2021

عبدالرحمن الداخل  (2)

یورپ میں آزاد اُمَوی ریاست کے بانی عبدالرحمن الداخل ۱۳۸ھ/ 756ء سے ۱۷۲ھ / 788ء تک اندلس کے حکمراں رہے۔ وہ 731ء میں دمشق میں پیدا ہوئے اور 30؍ ستمبر 788ء میں ان کا انتقال…

مفتی محمد اشرف عاطف جون 15, 2021