"تقریب رُونمائی کتاب ”الفیض الکبیر شرح الخیر الکثیر

"تقریب رُونمائی کتاب ”الفیض الکبیر شرح الخیر الکثیر
تفصیل

*تقریبِ رُونمائی کتاب ”الفیض الکبیر شرح الخیر الکثیر“*

 

الحمدللہ ! حضرت الامام شاہ ولی اللہ دہلویؒ کے علوم حکمت کے خزینوں پر مشتمل ان کی تالیفِ لطیف "الخیر الکثیر" (جو "خزائن الرحمة" کے عنوان سے بھی موسوم ہے) حضرت مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری مدظلہ کی تحقیق و تعلیق کے ساتھ طبع ہوکر شائع ہوچکی ہے،۔ اس کو "الفیض الکبیر شرح الخیر الکثیر الملقب بمفاتح الرحمة لخزائن الحکمة" کا عنوان دیا گیا ہے ۔

اس کتاب کی تقریبِ رونمائی 22 محرم الحرام 1444ھ/ 21 اگست 2022ء بروز اتوار کو ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ (ٹرسٹ) لاہور کے السعید بلاک کے کانفرنس روم میں منعقد ہوئی، جس میں شارح کتاب حضرت مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری، سرپرست ادارہ ڈاکٹر مفتی سعیدالرحمن، صدر ادارہ مولانا مفتی عبدالمتین نعمانی ، مولانا مفتی محمد مختار حسن اور مولانا مفتی عبدالقدیر کے علاوہ ملک بھر سے علماء، پروفیسرز، وکلا، ڈاکٹرز، انجینئرز اور طلباء سمیت زندگی کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے نمائندہ افراد نے شرکت کی۔ 

یہ کتاب عربی زبان میں حضرت الامام شاہ ولی اللہ دہلویؒ کی تصنیف ہے۔ سب سے پہلے یہ کتاب امامِ انقلاب حضرت مولانا عبیداللہ سندھیؒ اور حضرت مولانا محمد انور شاہ کشمیریؒ کی کاوشوں سے مجلس علمی ڈابھیل (انڈیا) سے 1934ء میں طبع ہوئی تھی۔ اس کے بعد 1959ء میں پشاور سے طبع ہوئی ۔ اس کے علاوہ اس کے اُردو ترجمے بھی شائع ہوئے۔ جن میں سے ایک حضرت مولانا سندھی کا املائی ترجمہ ہے، جس کو معروف محقق حضرت مولانا غلام مصطفیٰ قاسمی نے شاہ ولی اللہ اکیڈمی حیدرآباد کے تحت شائع کرایا ۔

اس کتاب کی پہلی باقاعدہ اشاعت کے تقریباً ایک سو سال بعد اب حضرت مولانا مفتی عبدالخالق آزد رائے پوری مدظلہ کی تحقیق و تعلیق کے ساتھ ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ (ٹرسٹ) لاہور کے شعبہ "رحیمیہ مطبوعات لاہور" سے شائع کی گئی ہے۔ جس میں حضرت رائے پوری نے تدقیق و تحقیق کے ساتھ اس کے متن کو مختلف نسخوں اور طباعتوں سے موازنہ و مقارنہ کرکے کھنگالا اور انسانی وسعت کے مطابق اصل متن کو نکھار کر قارئین کے سامنے رکھا ہے۔ نیز اس میں قاری کے فہم و مطالعے کو آسان بنانے کے لیے پیراگرافنگ اور بعض جگہ نکات کی شکل میں عبارت کو واضح کردیا گیا۔ اس کے مشکل الفاظ و جملوں کی لغوی تحقیق کی۔ نیز اس کے ساتھ ساتھ اس کی عبارتوں کی تشریح حضرت الامام شاہ ولی اللہ دہلویؒ کی ہی دیگر تصانیف سے کردی گئی ہے۔  

اس کتاب میں ڈاکٹر مفتی سعیدالرحمٰن (سرپرست ادارہ و سابق صدر شعبہ علومِ اسلامیہ، بہاء الدین زکریا یونیورسٹی، ملتان) کا تحریر کردہ "الکلمات الابتدائیہ" اور مولانا مفتی عبدالقدیر (شیخ الحدیث و رئیس جامعہ اشاعت العلوم مرکزی جامع مسجد چشتیاں، ضلع بہاولنگر) کا ”حکمائے ربانیین کے طریقہ کی اہمیت اور "الخیر الکثیر" کی امتیازی حیثیت“ پر مضمون اس کتاب کے شروع میں شاملِ اشاعت ہے۔ نیز شارح کتاب مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری مدظلہ نے اس پر ایک تفصیلی مقدمہ بھی تحریر کیا ہے، جس میں کتاب کا پس منظر، اہمیت اور تفصیلات درج کرتے ہوئے اس کے موضوع و مقصد پر روشنی ڈالی ہے۔ 

تقریب رونمائی کی نظامت کے فرائض مولانا مفتی محمد مختار حسن نے انجام دیے۔ تقریب کا آغاز مولانا مفتی عبدالقدیر مدظلہ کی تلاوتِ کلامِ پاک کے ساتھ ہوا۔ اس کے بعد مولانا مفتی ڈاکٹر سعیدالرحمن (سرپرست ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ لاہور) نے کتاب "الخیر الکثیر" کی اہمیت پر روشنی ڈالتے ہوئے شارح کتاب حضرت آزاد رائے پوری کی علمی و تحقیقی کاوشوں کو سراہا اور انھیں امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ کے علوم و معارف کے حوالے سے کام کرنے پر خراجِ تحسین پیش کیا۔ 

اس کے بعد شارحِ کتاب حضرت مولانا مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری مدظلہٗ نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کتاب "الخیر الکثیر" کے مضامین کا خلاصہ بیان کیا۔ نیز اس میں کیے گئے تحقیقی کام پر روشنی ڈالی، اس موقع پر انہوں نے ڈاکٹر مفتی سعیدالرحمٰن ، مولانا مفتی عبدالقدیر صاحبان اور دیگر معاونین کا اس علمی کام میں تعاون پر ان کا شکریہ بھی ادا کیا۔  

تقریبِ رونمائی کا اختتام شارحِ کتاب حضرت رائے پوری مدظلہ کی دعا کے ساتھ ہوا۔ 

یہ کتاب رحیمیہ بک شاپ، 33/A کوئینز روڈ ، شارع فاطمه جناح، لاهور سے حاصل کی جاسکتی ہے۔ 

فون نمبرز: 

0092-42-36307714,36369089

رپورٹ: سید نفیس مبارک ہمدانی، لاہور

تاریخ اور وقت
اگست 24, 2022 @ 05:30شام