دشمن کے منفی رویوں کو سمجھنا اور نظم و نسق کی پابندی

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri
Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri
Mar 13, 2024 - Dars-e-Quran
دشمن کے منفی رویوں کو سمجھنا اور نظم و نسق کی پابندی

 

گزشتہ آیات (البقرہ: 104 تا 107) میں یہ واضح کیا گیا کہ بنی اسرائیل کے یہودی اس حد تک انحطاط، ذلت اور غضبِ الٰہی کے مستحق ہوچکے ہیں کہ اب اُن کا تحریف شدہ دین منسوخ کیا جانا ضروری ہے۔ زمانہ بدلنے اور رسول ﷺ کی آمد پر نئے دین اور نظم و ضبط پر مبنی نئے نظام کی ضرورت ہے۔ مسلمانوں کو یہودیوں کے عادات و اطوار سے دور رہنے کی ضرورت ہے۔ ان کی طرف جھکاؤ اور میلان اختیار کرنا درست نہیں ہے۔

ان آیات (البقرہ: 108-109) میں مسلمانوں سے کہا جا رہا ہے کہ وہ دشمن کے منفی رویوں خاص طور پر یہودیوں کی غلط عادات کو سمجھیں۔ وہ اُن کی غلط عادات اور رویے اختیار کرکے ایمان کے بجائے کفر کا راستہ مت اختیار کریں۔ اس لیے کہ وہ تمھارے ساتھ بڑا حسد رکھتے ہیں اور چاہتے ہیں کہ دینِ حق کو چھوڑ کر تم مرتد ہوجاؤ۔

﴿أَمْ تُرِيدُونَ أَنْ تَسْأَلُوا رَسُولَكُمْ كَمَا سُئِلَ مُوسَى مِنْ قَبْلُ﴾ (کیا تم مسلمان بھی چاہتے ہو کہ سوال کرو اپنے رسول سے جیسے سوال ہوچکے ہیں موسیٰ سے اس سے پہلے) : مدینہ میں آپؐ کی آمد سے پہلے اَوس اور خزرج کے لوگ یہودِ مدینہ کے ساتھ دوستانہ تعلقات رکھتے تھے۔ آپؐ کی آمد کے بعد یہودی انھیں دینِ اسلام سے روکنے کے لیے طرح طرح کے شبہات اور سوالات سجھاتے تھے۔ مسلمانوں کے دل میں یہ سوال بھی ڈالا گیا کہ وہ رسول اللہ ﷺ سے پوچھیں کہ اللہ تعالیٰ کے وعدے کے مطابق ہمیں حکومت اور خلافت کی صورت میں نصرتِ الٰہی کب تک ملے گی، تاکہ ہمیں اطمینان ہوجائے۔ اسی طرح کے مختلف شکوک و شبہات اور سوالات پیدا کیے جاتے تھے۔

اس پر اللہ تبارک و تعالیٰ نے فرمایا کہ تمھارا اپنے رسول ﷺ سے ایسے سوالات کرنا بالکل اُسی طرح ہے، جیسا کہ حضرت موسیٰ علیہ السلام سے ان یہودیوں نے شکوک و شبہات پیدا کرنے والے سوالات کیے تھے۔ اللہ تعالیٰ نے ’’سورت النساء‘‘ میں فرمایا: ’’تجھ سے اہلِ کتاب سوال کرتے ہیں کہ تُو اُن پر اُتار لاوے لکھی ہوئی کتاب آسمان سے، سو مانگ چکے ہیں موسیٰ سے اس سے بھی بڑی چیز، اور کہا: ہم کو دکھلادے اللہ کو بالکل سامنے‘‘۔ (-4 النساء: 153) زیرِنظر آیت میں مسلمانوں سے کہا جا رہا ہے کہ جس طرح یہود حضرت موسیٰ علیہ السلام کے سامنے اُلٹے سیدھے سوالات اور شکوک و شبہات کرکے کفر کا راستہ اختیار کرچکے ہیں، کیا تم بھی ایسا ہی کفر کا راستہ اختیار کرنا چاہتے ہو؟ یاد رکھو:

﴿وَمَنْ يَتَبَدَّلِ الْكُفْرَ بِالْإِيمَانِ فَقَدْ ضَلَّ سَوَاءَ السَّبِيلِ ﴾  (اور جو کوئی کفر لیوے بدلے ایمان کے تو وہ بہکا سیدھی راہ سے): کسی سوال کے جواب کو پورے عقل و شعور کے ساتھ نہ سمجھنا اور اپنے شک اور شبہ پر اصرار کرنا دراصل کفر کا راستہ اختیار کرنا ہے۔ یہودیوں نے یہی طرزِ عمل اختیار کیا۔ مسلمانوں کو اس سے روکا جا رہا ہے۔ چناں چہ حضرت شیخ الہند مولانا محمودحسنؒ فرماتے ہیں: ’’یہودیوں کی باتوں پر ہرگز اعتماد نہ کرنا۔ جس کسی کو یہودیوں کے شبہ ڈالنے سے شبہ پڑگیا‘ وہ کافر ہوا۔ اس کی احتیاط رکھو اور یہود کے کہنے سے تم اپنے نبی کے پاس شبہ نہ لاؤ، جیسے وہ اپنے نبی کے پاس لاتے تھے‘‘۔اور ایمان کے بدلے میں کفر اختیار کرنا بہت بڑی گمراہی کا راستہ ہے۔

﴿وَدَّ كَثِيرٌ مِنْ أَهْلِ الْكِتَابِ لَوْ يَرُدُّونَكُمْ مِنْ بَعْدِ إِيمَانِكُمْ كُفَّارًا ﴾  (دل چاہتا ہے بہت سے اہلِ کتاب کا، کہ کسی طرح تم کو پھیر کر مسلمان ہوئے پیچھے کافر بنادیں): دراصل ایسے سوالات اور شکوک و شبہات پیدا کرکے یہودیوں کی یہ بڑی آرزو اور تمنا ہے کہ کسی طرح مدینہ میں ایمان لانے والے لوگ اپنا دین چھوڑ کر مرتد ہوجائیں اور آپؐ کی مدینہ منورہ آمد سے پہلے جس طرح یہودیوں کی علمی اجارہ داری قائم تھی، اور مسخ شدہ یہودی تعلیمات کے ذریعے سے وہ مفادات اُٹھا رہے تھے، اسی طرح بدستور مدینہ کے لوگوں کو اپنے مقاصد اور مفادات کے لیے استعمال کرتے رہیں۔

﴿حَسَدًا مِنْ عِنْدِ أَنْفُسِهِمْ مِنْ بَعْدِ مَا تَبَيَّنَ لَهُمُ الْحَقُّ﴾  (بہ سبب اپنے دلی حسد کے، بعد اس کے کہ ظاہر ہوچکا ان پر حق): اصل بات یہ ہے کہ ان کے دلوں میں مسلمانوں کے خلاف بڑا حسد اور بغض ہے، حال آں کہ ان پر دینِ حق بالکل ظاہر ہوچکا ہے۔ اس کے باوجود یہ اپنی بداَخلاقی اور انسان دشمنی سے باز نہیں آتے اور مدینہ منورہ میں رہنے والے لوگوں کی ترقی سے دلوں میں حسد، کینہ اور نفرت کے جذبات رکھتے ہیں۔

﴿فَاعْفُوا وَاصْفَحُوا حَتَّى يَأْتِيَ اللَّهُ بِأَمْرِهِ إِنَّ اللَّهَ عَلَى كُلِّ شَيْءٍ قَدِيرٌ﴾  (سو تم درگزر کرو اور خیال میں نہ لاؤ، جب تک بھیجے اللہ اپنا حکم، بے شک اللہ ہر چیز پر قادر ہے): جب مسلمانوں نے یہودیوں کی ان قبیح عادات اور اطوار اور منفی رویوں کو اچھی طرح سمجھ لیا، خاص طور پر اُن کے حسد، کینہ اور بغض سے واقفیت ہوگئی تو مسلمانوں کا ارادہ اُن سے لڑائی لڑنے اور جھگڑا کرنے کا ہوا، اس پر اللہ تبارک و تعالیٰ نے دُنیاوی مصلحت اور تنظیمی حکمتِ عملی کے طور پر مسلمانوں کو حکم دیا کہ یہودیوں کی ان حرکتوں کو نظرانداز کرو، اُن کے منفی رویوں کا خیال دل میں لا کر پریشان مت ہو۔ فی الحال درگزر کرو، یہاں تک کہ اللہ تبارک وتعالیٰ کی طرف سے ان سے لڑائی کا واضح حکم آجائے۔ ایک وقت آئے گا، جب ان کی طرف سے کھلے طور پر میثاقِ مدینہ کی خلاف ورزی اور اپنے حلف سے غداری کے نتیجے میں جھگڑے اور لڑائی کی نوبت آئے گی، اُس وقت ان سے جہاد کرنا ضروری قرار پائے گا۔ بے شک اللہ تعالیٰ ہر چیز پر قادر ہے۔

ان آیات میں مسلمانوں سے کہا جا رہا ہے کہ انسانیت دشمن قوموں اور غضبِ الٰہی کے مستحق مذاہب کی منفی عادات و اطور اور رویوں سے علمی اور فکری طور پر شعوری آگاہی حاصل کرنا ضروری ہے۔ اُن کے جاہلانہ سوالات سے اپنے دین کے نظام پر شکوک و شبہات نہیں پیدا کرنے چاہئیں۔ پورے فہم اور شعور کے ساتھ اپنے انسانیت دوست دینی نظام کی سمجھ اور اس پر اعتماد ہونا ضروری ہے۔ اسی کے ساتھ ساتھ نظم و ضبط اور ڈسپلن برقرار رکھنا بھی ضروری ہے۔ دشمن کے رویوں کو سمجھنے کے بعد جذباتی طور پر لڑائی جھگڑے پیدا کرنا اور نظم و ضبط کے بغیر نجی جنگ جوئی اختیار کرنا درست نہیں، بلکہ اپنے داخلی نظم و نسق پر توجہ دینے کی ضرورت ہے، جس کی وضاحت اگلی آیات میں ہے۔

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri
Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri

Spiritual Mentor of Khanqah Aalia Rahimia Qadiria Azizia Raipur

Chief Administrator Rahimia Institute of Quranic Sciences

Related Articles

سزا و جزا کے نظام سے کوئی نہیں بچ سکتا

وَاتَّقوا يَومًا لا تَجزي نَفسٌ عَن نَفسٍ شَيئًا وَلا يُقبَلُ مِنها شَفاعَةٌ وَلا يُؤخَذُ مِنها عَدلٌ وَلا هُم يُنصَرونَ (48:2) (اور ڈرو اس دن سے کہ کام نہ آئے کوئی شخص کسی کے کچھ بھی، اور قبول نہ ہو…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Jan 09, 2021

بنی اسرائیل کی اجتماعی تربیت کے اُمور

وَظَلَّلنا عَلَيكُمُ الغَمامَ وَأَنزَلنا عَلَيكُمُ المَنَّ وَالسَّلوىٰ ۖ كُلوا مِن طَيِّباتِ ما رَزَقناكُم ۖ وَما ظَلَمونا وَلٰكِن كانوا أَنفُسَهُم يَظلِمونَ (اور سایہ کیا ہم نے تم پر اَبر کا اور اُتارا تم پر مَن…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Jun 19, 2021

انعاماتِ الٰہیہ اور غلطیوں کی معافی ؛ تربیت کا درست طریقہ

وَإِذ فَرَقنا بِكُمُ البَحرَ فَأَنجَيناكُم وَأَغرَقنا آلَ فِرعَونَ وَأَنتُم تَنظُرونَ. وَإِذ واعَدنا موسىٰ أَربَعينَ لَيلَةً ثُمَّ اتَّخَذتُمُ العِجلَ مِن بَعدِهِ وَأَنتُم ظالِمونَ ثُمَّ عَفَونا عَنكُم مِن بَعدِ ذٰلِكَ لَعَلَّكُم تَشكُرونَ…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Mar 14, 2021

عیدالاضحیٰ کے دن کی تاریخی اہمیت

۱۰؍ ذوالحجہ ۱۴۴۱ھ / یکم؍ اگست 2020ء کو حضرت اقدس مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری مدظلہٗ نے ادارہ رحیمیہ لاہور میں خطبہ عید الاضحی دیتے ہوئے ارشاد فرمایا: ’&rsqu…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Jul 07, 2021