صفاتِ الٰہیہ میں غور و فکر سے متعلق احادیثِ قدسیہ

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri
Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri
Mar 15, 2024 - Waliullahi thoughts
صفاتِ الٰہیہ میں غور و فکر سے متعلق احادیثِ قدسیہ

اِخبات الی اللہ کا خُلق حاصل کرنے کے لیے اللہ تعالیٰ کی صفات میں غور و فکر اور تدبر ضروری ہے، اس کے لیے تلاوتِ قرآن حکیم کے ذریعے قرآنی آیات میں غور و تدبر کیا جاتا ہے۔ نیز احادیثِ قدسیہ میں بیان کردہ صفاتِ الٰہیہ پر غور و فکر بھی بڑا مفید ہے۔اس حوالے سے امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں :

’’(تدبر صفاتِ الٰہی کے لیے) قرآن حکیم کے علاوہ وہ احادیثِ قدسیہ ہیں، جو رسول اللہ ﷺ نے اللہ تبارک و تعالیٰ سے روایت کی ہیں، درجِ ذیل ہیں:

(1۔ اللہ تعالیٰ نے ظلم کو حرم قرار دیا ہے)

نبی اکرم ﷺ فرماتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:

٭           ’’اے میرے بندو! میں نے اپنے اوپر ظلم کو حرام قرار دیا ہے اور میں نے تمھارے درمیان بھی اسے حرام قرار دیا ہے، اس لیے تم ایک دوسرے پر ظلم مت کرو۔

٭           اے میرے بندو! تم سب کے سب گمراہ ہو، سوائے اس کے جسے میں ہدایت دے دوں، اس لیے مجھ سے ہدایت مانگو، میں تمھیں ہدایت دوں گا۔

٭           اے میرے بندو! تم سب کے سب بھوکے ہو، سوائے اس کے جسے میں کھلاؤں، اس لیے مجھ سے کھانا مانگو، میں تمھیں کھلاؤں گا۔

٭           اے میرے بندو! تم سب کے سب ننگے ہو، سوائے اس کے جسے میں لباس پہناؤں، لہٰذا مجھ سے لباس مانگو، میں تمھیں لباس پہناؤں گا۔

٭           اے میرے بندو! تم دن رات گناہ کرتے ہو اور میں ہی سب کے سب گناہ معاف کرتا ہوں، سو مجھ سے مغفرت مانگو، میں تمھارے گناہ معاف کروں گا۔

٭           اے میرے بندو! تم کبھی مجھے نقصان پہنچانے کی طاقت نہیں رکھو گے کہ مجھے نقصان پہنچا سکو، نہ کبھی مجھے فائدہ پہنچانے کے قابل ہو گے کہ مجھے فائدہ پہنچا سکو۔

٭           اے میرے بندو! اگر تمھارے پہلے والے اور تمھارے بعد والے اور تمھارے انسان اور تمھارے جنات سب مل کر تم میں سے ایک انتہائی متقی انسان کے دل کے مطابق ہو جائیں تو اس سے میری حکومت اور ملک میں کوئی اضافہ نہیں ہو سکتا۔

٭           اے میرے بندو! اگر تمھارے پہلے والے اور تمھارے بعد والے اور تمھارے انسان اور تمھارے جنات سب مل کر تم میں سے سب سے فاجر آدمی کے دل کے مطابق ہوجائیں تو اس سے میری حکومت اور ملک میں کوئی کمی نہیں ہو گی۔

٭           اے میرے بندو! اگر تمھارے پہلے اور تمھارے پچھلے اور تمھارے انسان اور تمھارے جنات سب مل کر ایک کھلے میدان میں کھڑے ہو جائیں اور مجھ سے مانگیں اور میں ہر ایک کو اس کی مانگی ہوئی چیز عطا کر دوں تو اس سے جو میرے پاس ہے، اس میں اتنا بھی کم نہیں ہوگا جو اُس سوئی سے (کم ہوگا) جو سمندر میں ڈالی (اور نکال لی) جائے۔

٭           اے میرے بندو! (یہ جو کچھ تمھیں دیا جاتا ہے) یہ تمھارے ہی اُن اعمال کے نتائج کے سوا اور کچھ نہیں ہوتا، جو میں تمھارے لیے محفوظ رکھتا ہوں۔ پھر میں اُن کا تمھیں پورا پورا بدلہ دیتا ہوں۔ پس جو آدمی خیر اور بھلائی کا نتیجہ پائے تو اُس کو چاہیے کہ وہ اللہ کا شکر ادا کرے۔ اور جو آدمی خیر کے علاوہ نتیجہ پائے تو اُسے چاہیے کہ وہ صرف اپنے آپ کو ہی ملامت کرے‘‘۔ (صحیح مسلم، کتاب البر و الصلہ، باب تحریم الظلم: 6572)

(2۔ توبہ کی قبولیت کا ایک اہم واقعہ)

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

’’تم سے پہلے لوگوں میں سے ایک شخص تھا، اس نے ننانوے انسان قتل کیے۔ پھر اس نے زمین پر بسنے والوں میں سے سب سے بڑے عالم کے بارے میں پوچھا (کہ وہ کون ہے؟) اسے ایک راہب کا پتہ بتایا گیا۔ وہ اس کے پاس آیا اور پوچھا کہ اس نے ننانوے قتل کیے ہیں، کیا اس کے لیے توبہ (کا کوئی راستہ) ہے؟ اس نے کہا: نہیں! تو اس نے اسے بھی قتل کر دیا اور اس (کے قتل) سے سو قتل پورے کر لیے۔

اس نے پھر اہل زمین میں سے سب سے بڑے عالم کے بارے میں دریافت کیا۔ اسے ایک عالم کا پتہ بتایا گیا۔ تو اس نے (اس کے پاس جا کر) کہا: اس نے سو قتل کیے ہیں، کیا اس کے لیے توبہ (کا امکان) ہے؟ اس (عالم) نے کہا: ہاں! اس کے اور توبہ کے درمیان کون حائل ہو سکتا ہے؟ تم فلاں فلاں سرزمین پر چلے جاؤ، وہاں (ایسے) لوگ ہیں جو اللہ تعالیٰ کی عبادت کرتے ہیں، تم بھی ان کے ساتھ اللہ کی عبادت میں مشغول ہو جاؤ اور اپنی سرزمین پر واپس نہ آؤ۔ یہ بُری سرزمین ہے۔

وہ چل پڑا، یہاں تک کہ جب آدھا راستہ طے کر لیا تو اسے موت نے آ لیا۔ اس کے بارے میں رحمت کے فرشتے اور عذاب کے فرشتے جھگڑنے لگے۔ رحمت کے فرشتوں نے کہا: یہ شخص توبہ کرتا ہوا اپنے دل کو اللہ کی طرف متوجہ کر کے آیا تھا۔ اور عذاب کے فرشتوں نے کہا: اس نے کبھی نیکی کا کوئی کام نہیں کیا۔ تو ایک فرشتہ آدمی کے روپ میں ان کے پاس آیا، دونوں طرف کے فرشتوں نے اسے اپنے درمیان (ثالث) مقرر کر لیا۔ اس نے کہا: دونوں زمینوں کا درمیانی فاصلہ ماپ لو، وہ دونوں میں سے جس زمین کے زیادہ قریب ہو تو وہ اسی (زمین کے لوگوں) میں سے ہوگا۔

فرشتوں نے مسافت کو ماپا تو اسے اس زمین کے قریب تر پایا جس کی طرف وہ جا رہا تھا، چناں چہ رحمت کے فرشتوں نے اسے اپنے ہاتھوں میں لے لیا‘‘۔

حضرت قتادہؒ نے کہا: حسن (بصریؒ) نے کہا: ’’(اس حدیث میں) ہمیں بتایا گیا کہ جب اسے موت نے آ لیا تھا تو اس نے خود کو اپنے سینے کو (گھسیٹ کر گناہوں بھری زمین سے) دور کر لیا تھا‘‘۔ (صحیح مسلم، کتاب التوبہ، حدیث: 7008)

(أبواب الإحسان، باب: 3، بقیّۃُ مَباحث الإحسان)

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri
Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri

Spiritual Mentor of Khanqah Aalia Rahimia Qadiria Azizia Raipur

Chief Administrator Rahimia Institute of Quranic Sciences

Related Articles

احسان و سلوک کی ضرورت اور اہمیت  (1)

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں : ’’جاننا چاہیے کہ شریعت نے انسان کو سب سے پہلے حلال و حرام کے حوالے س…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Jul 10, 2021

تلاوت، ذکر اور دُعا کی روح

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں : (تلاوتِ قرآن حکیم کی روح) ’’قرآن حکیم کی تلاوت کی روح یہ ہے کہ: ب…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Sep 10, 2021

تمام نیکیوں کا بنیادی اساسی اُصول؛ توحید ِالٰہی  (2)

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں : [توحید کے ان آخری دو مرتبوں کی مخالف جماعتیں] ’’... توحید کے ان آ…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Jun 13, 2021

سماحت ِنفس: انسانیت کا تیسرا بنیادی خُلق

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں : ’’(انسانیت کے بنیادی اَخلاق میں سے) تیسرا اصول ’’سماحتِ نف…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Oct 10, 2021