فطری ترقی کے حِجَابات کو دور کرنے کا طریقہ  (1)

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri
Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri
Feb 17, 2021 - Waliullahi thoughts
فطری ترقی کے حِجَابات کو دور کرنے کا طریقہ  (1)

(گزشتہ باب میں انسانوں کی فطری ترقی کے لیے اَخلاقِ اربعہ کے حصول کے راستے کے تین حجابات اور رُکاوٹوں کا تذکرہ تھا۔ اس باب میں ان حجابات کو دور کرنے کے علمی اور عملی طریقے بیان کیے گئے ہیں۔ مترجم) 
امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں :
(حجابِ طبع دور کرنے کے دو طریقے)
’’جاننا چاہیے کہ حجابِ طبع کو دور کرنے کی تدبیر اور طریقہ دو چیزوں پر مشتمل ہے: 
(1)     ایک یہ کہ انسان کو اپنی طبیعت اور بہیمیت کے حجاب کو دور کرنے کی ترغیب دی جائے۔ ایسے کاموں کا حکم دیا جائے اور اُن پر اُبھارا جائے، جن سے طبیعت کا حجاب دور ہوتا ہے۔ 
(2)    دوسرے یہ کہ جب انسان پر طبعی اور بہیمی حجاب غالب آئے اور اس کے تحت کوئی کام کرے تو اُسے سزا دی جائے۔ وہ چاہے یا نہ چاہے، اس کا مواخذہ کیا جائے۔ 
(پہلے طریقۂ کار سے متعلق احکام)
اسے ایسی ریاضتوں اور مشقتوں کا حکم دیا جائے جو اس کی بہیمیت اور طبیعت کے زور کو توڑ دے اور بہیمی تقاضوں کو کمزور کردے۔ مثلاً: 
(i)  روزہ رکھنے کا حکم 
(ii)  رات کو جاگ کر تہجد وغیرہ عبادات کرنے کا حکم
اس طریقۂ کار کے حوالے سے بعض لوگ سختی اور تشدد اختیار کرتے ہیں۔ وہ اللہ کے پیدا کیے ہوئے اعضا اور اُس کی تخلیق میں تغیر و تبدل کا راستہ اختیار کرتے ہیں۔ مثلاً: 
(i)  اپنی شہوتوں کو کنٹرول کرنے کے لیے آلاتِ تناسل کا کاٹ لینا 
(ii)  یا کسی عمدہ اور بہترین عضو مثلاً ہاتھ اور پاؤں کو باندھ کر خشک کرلینا 
ایسے لوگ بہت زیادہ جاہل عبادت گزار ہوتے ہیں۔ حقیقت یہ ہے کہ تمام کاموں میں درمیانہ راستہ اختیار کرنا زیادہ بہتر ہوتا ہے۔ یاد رہے کہ روزہ اور رات کو جاگنا زہر بھرا علاج ہے۔ اس لیے اُسے صرف ضرورت کے بہ قدر استعمال کرنا واجب ہے۔ 
(دوسرے طریقۂ کار سے متعلق احکام)
جو آدمی اپنی طبعی خواہشات کی اتباع کرتا ہے، اس کی حوصلہ شکنی کرنا اور اس کے حیوانی رویوں کا ہر طرح سے انکار کرنا ضروری ہے۔ اس لیے کہ وہ سنتِ راشدہ یعنی سیدھے طریقے کا مخالف ہے۔ یہ بہت ضروری ہے کہ اُس کے سامنے ہر طرح کے طبعی اور بہیمی خواہشات کے غلبے سے دور رہنے کا طریقہ بیان کیا جائے۔ اس سلسلے میں لوگوں پر بہت زیادہ تنگی کرنا بھی مناسب نہیں ہے۔ 
اسی طرح تمام انسانوں کے لیے صرف زبانی مذمت اور انکار ہی کافی نہیں ہوتا، بلکہ بعض لوگ اس وقت تک درست نہیں ہوتے، جب تک کہ اُن کو جسمانی طور پر کوئی سزا نہ دی جائے۔ اور اسی طرح بعض کاموں میں اُن پر کوئی مالی تاوان نہ لگایا جائے۔ اور ایسی سزا صرف اُن لوگوں کی بڑھی ہوئی خواہشات کو پورا کرنے پر دی جائے، جن کی وجہ سے لوگوں کے اجتماعی تقاضوں کا نقصان ہو رہا ہو، مثلاً زنا اور قتل وغیرہ پر سخت سزا کا نفاذ۔ 
(حجابِ رسم کو دور کرنے کے دو طریقے)
حجابِ رسم کو دور کرنے کی تدبیر اور طریقے بھی دو ہیں: 
(1)     ایک یہ کہ انسانی سوسائٹی میں ہر سطح کے سیاسی اور معاشی ارتفاقات سرانجام دیتے ہوئے اللہ کے احکامات کو پیش نظر رکھنا لازمی قرار دیا جائے۔ چناںچہ: 
    (i)  بعض اجتماعی کاموں کا آغاز بسم اللہ پڑھ کر کرنے کا حکم دیا گیا ہے۔ 
    (ii)  بعض اجتماعی کاموں اور ارتفاقات کی ایسی حدود و قیود مقرر کردی گئی ہیں، جنھیں 
        کرتے وقت اللہ تعالیٰ کے احکامات کی پوری رعایت رکھنا ضروری ہے(جیسا 
         کہ خرید و فروخت، لین دین اور قرض سے متعلق شرعی احکامات ہیں)۔ 
(2)    اجتماعی کاموں کے حوالے سے اللہ تعالیٰ کے دیے ہوئے تمام احکامات کا عملی رسم اور نظام بنایا جائے۔ پھر اسے انسانی سوسائٹی میں خوب فروغ دیا جائے: 
    (i)  اس نظام اور اس کے قوانین کی پابندی کو ہر حال میں لازمی قرار دیا جائے، خواہ 
         لوگ چاہیں یا نہ چاہیں۔ 
    (ii)  جو لوگ اس نظامِ عدل کی خلاف ورزی کریں، ان کی برائی اور خرابی لوگوں کے 
         سامنے بیان کی جائے۔ 
    (iii)  انھیں ملکی اقتدار اور جاہ پرستی پر مبنی مرغوب ماحول سے دور رکھا جائے۔ ملکی رسوم 
          و رواج اور نظام سے انھیں روکا جائے۔ 
ان دو تدبیروں اور طریقۂ کار سے اجتماعی نظام میں پیدا ہونے والی خرابیوں اور فرسودہ رسومات کی آفتوں سے بچا جاسکتا ہے۔ اس طرح قائم شدہ نظامِ عدل اللہ کی عبادت کرنے والوں کے لیے ممد و معاون ہوتا ہے۔ اور اس طرح حق کی طرف دعوت دینے والی انسانی جماعتیں وجود میں آتی ہیں‘‘۔  (جاری ہے)  (باب طریق رفع ہٰذہ الحُجب)
 

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri
Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri

Spiritual Mentor of Khanqah Aalia Rahimia Qadiria Azizia Raipur

Chief Administrator Rahimia Institute of Quranic Sciences

Related Articles

احسان و سلوک کی ضرورت اور اہمیت  (1)

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں : ’’جاننا چاہیے کہ شریعت نے انسان کو سب سے پہلے حلال و حرام کے حوالے س…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Jul 10, 2021

سماحت ِنفس: انسانیت کا تیسرا بنیادی خُلق

امام شاہ ولی اللہ دہلویؒ ’’حُجّۃُ اللّٰہِ البالِغہ‘‘ میں فرماتے ہیں : ’’(انسانیت کے بنیادی اَخلاق میں سے) تیسرا اصول ’’سماحتِ نف…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Oct 10, 2021

کائنات میں موجود کثرتِ اشیا کی حقیقت!

رپورٹ: سیّد نفیس مبارک ہمدانی، لاہور 15؍ جنوری 2021ء کو حضرت اقدس مفتی عبدالخالق آزاد رائے پوری مدظلہٗ نے ادارہ رحیمیہ لاہور میں جمعتہ المبارک کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے…

Mufti Abdul Khaliq Azad Raipuri Feb 17, 2021

شائقینِ علومِ ولی اللّٰہی کے لیے عظیم خوش خبری

رحیمیہ مطبوعات لاہور کی طرف سے شائقینِ علومِ ولی اللّٰہی کے لیے عظیم خوش خبری تصنیفاتِ حضرت الامام شاہ ولی اللہ دہلویؒ کی تحقیق و شرح کے ساتھ عمدہ اشاعت حضرت اقد…

Admin Oct 13, 2022