نبویﷺ نظامِ حیات کی اہمیت

مولانا ڈاکٹر محمد ناصر
مولانا ڈاکٹر محمد ناصر
ستمبر 11, 2022 - درسِ حدیث
نبویﷺ نظامِ حیات کی اہمیت

عَنْ ابن مسعودؓ قال: قال رسول اللّٰہ ﷺ: ’’إِنّہ لیس مِن شیئٍ یُقرِّبُکم مِن الجَنّۃ، و یُبَاعِدُکم مِن النّار، إِلَّا قد أمرتُکم بہ، و لیس شیء یُقرِّبُکم مِن النّار، و یُبَاعِدُکم مِن الجنّۃ إِلَّا قد نَہیتُکم عنہ‘‘۔ (شعب الایمان: 10376)

(حضرت عبد اللہ ابن مسعودؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہﷺ نے فرمایا: ’’اے لوگو! تمھیں جنت کے قریب اور جہنم سے دور کوئی چیز نہیں کرسکتی، سوائے اس کے جس کا میں نے تمھیں حکم دیا۔ اور تمھیں جہنم کے قریب اور جنت سے دور کوئی چیز نہیں کرسکتی، سوائے اس کے جس سے میں نے تمھیں منع کیا۔)

دنیا و آخرت کی کامیابی کے لیے درست نظامِ حیات اختیار کرنا ضروری ہے۔ ایسا کامل نظامِ حیات صرف نبویؐ طریقے میں ہے، جو اُخروی نجات کے ساتھ دُنیوی فلاح و بہبود، امن و خوش حالی اور عدل و انصاف کے قیام کا یقینی راستہ ہے۔ تجربات اور مشاہدات کی روشنی میں انسان دنیا میں اچھے فیصلے اور کامیابیاں تو حاصل کرسکتا ہے، لیکن اس میں اُخروی کامیابی کی کوئی ضمانت نہیں ہوتی۔ کوئی نہ کوئی کمی اس وقت تک رہے گی، جب تک اسے نبویؐ ہدایات کے مطابق نہیں ڈھالا جاتا۔ یوں جنت کے حصول اور جہنم سے چھٹکارے کا یقینی طریقہ صرف رسول اللہﷺ کے دیے ہوئے نظامِ حیات میں ہے۔

آج سائنسی ترقیات اور اعلیٰ انتظامی صلاحیتوں کے باوجود دُنیا اس وقت فکری بے راہ روی، عملی کوتاہی کا شکار اور سکون و اطمینان کی دولت سے محروم ہے۔ اس کا سبب یہ ہے کہ دُنیوی مسائل کو ان بنیادی اَخلاقیات کے معیارات پر اختیار نہیں کیا جاتا جو اللہ کی طرف سے انبیاعلیہم السلام اور خاص طور پر آخری نبی اکرمﷺ کے ذریعے سے انسانوں کو دیا گیا ہے۔ چوں کہ اس کائنات کا خالق اور مدبر‘ اللہ ہے، اس لیے اس کائنات کے لیے بہتر نظام اللہ کے علاوہ کوئی اَور نہیں دے سکتا۔ خدائی ہدایات تک رسائی کا واحد راستہ انبیاعلیہم السلام کی تعلیمات میں مضمر ہے۔ معاشی، سیاسی اور سماجی حوالوں سے درست طرزِ زندگی کی نشان دہی انبیاعلیہم السلام کی تعلیمات کے بغیر ممکن نہیں ہے۔

آج انسانیت پریشانی میں مبتلا ہے۔ دنیا جہنم کدہ بنی ہوئی ہے۔ خوف، دہشت، بداَمنی، بھوک کا غلبہ ہے۔ معاشی اور سماجی طبقات موجود ہیں۔ یہ سب کچھ خود انسانوں کے قائم کردہ ہیں۔ اس کے ردِعمل میں جو افکار یا نظام دنیا میں موجود ہیں، وہ بھی خالص مادی بنیادوں پر ہیں۔ اور محض مادی بنیاد کی وَجہ سے کئی اخلاقی معیارات نظرانداز ہوگئے ہیں۔ آج انسانیت کو دُنیوی جہنم اور اُخروی جہنم سے بچانا ضروری ہے۔ اس دنیا کو جنت اور آخرت کی جنت کے حصول کے لیے اس امر کی ضرورت ہے کہ اس ہمہ گیر، آفاقی اور عالمگیر نظریے کی طرف آیا جائے کہ جس پر انسانیت نے ایک بار پہلے چل کر دنیا کو بھی جنت بنایا اور آخرت کی جنت کے بھی وہ وارث اور مالک بن گئے۔

متعلقہ مضامین

خوشامد سے بچو

عَنْ مُعَاوِیَۃَ رضی اللّٰہ عنہٗ قَالَ سَمعتُ رَسُولَ اللَّہِ ﷺ: یَقُوْلُ: ’’إِیَّاکُمْ وَ التَّمَادُحَ، فَإِنَّہُ الذَّبْحُ‘‘۔ (سنن ابن ماجہ، حدیث 3743) (حضرت امیرمعاویہؓ سے روایت ہے۔فر…

مولانا ڈاکٹر محمد ناصر فروری 17, 2021

معاہدۂ  حِلفُ الفُضول کی اہمیت

عَنْ عَبْدِالرَّحْمٰنِ بنِ عَوْفٍ قَالَ، قَالَ رَسُولُ اللّٰہِ ﷺ: ’’شَھِدْتُ غُلَاماً مَعَ عُمُومَتِی حِلْفَ الْمُطَیَّبِینَ فَمَا اُحِبُّ أَنَّ لِی حُمْرَالنَّعَمِ وَ انّی أَنْکُثُہُ‘‘۔ (حضرت عبدالرحمن بن عوفؓ سے م…

مولانا ڈاکٹر محمد ناصر مارچ 14, 2021

تقریب ِتکمیل صحیح بخاری شریف

ادارہ رحیمیہ علومِ قرآنیہ (ٹرسٹ) لاہور میں ہرسال دورۂ حدیث شریف کی کلاس ہوتی ہے۔ اس کلاس میں صحیح بخاری شریف کا درس ہوتا ہے۔ امسال حضرت اقدس مولانا مفتی شاہ عبدالخالق آزا…

ایڈمن مارچ 14, 2021

صاحب ِحکمت و شعور کی پہچان

عَنْ أَبِي خَلَّادٍ،ؓ وکَانَتْ لَہٗ صُحْبَۃٌ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللّٰہِﷺ: ’’إذَا رَأَیْتُمُ الرَّجُلَ قَدْ أُعْطِيَ زُھْدًا فِي الدُّنْیَا، وَقِلَّۃَ مَنْطِقٍ، فَاقْتَرِبُوا مِنْہُ، فَإِنَّہُ یُلْقي الْحِکْمَۃَ‘‘۔ (سُنن ابن …

مولانا ڈاکٹر محمد ناصر جنوری 09, 2021